Skip to main content

کلثوم نواز اور اسکی بیماری




ﺟﺐ ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﻧﮧ ﻣﻼ ﺗﻮ ﺣﺮﺍﻣﺨﻮﺭ ﻃﺒﻘﮯ ﻧﮯ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﺍﻧﺼﺎﻑ ﭘﺮ ﯾﮧ
ﺍﻟﺰﺍﻡ ﻟﮕﺎﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﮐﻠﺜﻮﻡ ﻧﻮﺍﺯ ﮐﯽ ﺑﯿﻤﺎﺭﯼ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﻣﺬﺍﻕ ﮐﺎ ﻧﺸﺎﻧﮧ ﺑﻨﺎ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﭼﻨﺪ ﺍﯾﮏ ﺑﻨﯿﺎﺩﯼ ﺳﻮﺍﻻﺕ ﺁﭖ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﺍ ﺩﻋﻮﯼ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﮏ ﭘﭩﻮﺍﺭﯼ ﺩﺍﻧﺸﻮﮌ ﺑﮭﯽ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﯽ ﮨﻤﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﮮ ﮔﺎ۔
1 ۔ ﮐﻠﺜﻮﻡ ﻧﻮﺍﺯ ﮐﯽ ﺑﯿﻤﺎﺭﯼ ﮐﯽ ﺧﺒﺮ ﺳﻦ ﮐﺮ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﻧﮯ ﺳﮯ ﺳﺐ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺩﻋﺎﺋﯿﮧ ﮐﻠﻤﺎﺕ ﮐﺎ ﺍﻇﮩﺎﺭ ﮐﯿﺎ، ﭨﻮﯾﭩﺮ ﺍﻭﺭ ﻓﯿﺲ ﺑﮏ ﭘﺮ ﭘﯿﻐﺎﻣﺎﺕ ﺑﮭﯽ ﺍﺭﺳﺎﻝ ﮐﺌﮯ۔ ﺍﺳﺪ ﻋﻤﺮ ﺳﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ ﻓﻮﺍﺩ ﭼﻮﮨﺪﺭﯼ ﺗﮏ، ﺗﺤﺮﯾﮏ ﺍﻧﺼﺎﻑ ﮐﮯ ﻋﮩﺪﯾﺪﺍﺭﺍﻥ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﻧﯿﮏ ﺗﻤﻨﺎﻭٔﮞ ﮐﺎ ﺍﻇﮩﺎﺭ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ۔ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﺍﻧﺼﺎﻑ ﭘﺮ ﯾﮧ ﺍﻟﺰﺍﻡ ﻟﮕﺎﻧﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﻠﺜﻮﻡ ﻧﻮﺍﺯ ﮐﯽ ﺑﯿﻤﺎﺭﯼ ﮐﺎ ﻣﺬﺍﻕ ﺍﮌﺍﯾﺎ، ﮐﯿﺴﮯ ﺟﺎﺋﺰ ﮨﻮﮔﯿﺎ؟
2 ۔ ﺍﮔﺮ ﺍﻟﺰﺍﻡ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﺳﻮﺷﻞ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﭘﺮ ﭘﯽ ﭨﯽ ﺁﺋﯽ ﮐﮯ ﺳﭙﻮﺭﭨﺮﺯ ﮐﺎ ﺭﻭﯾﮧ ﮨﮯ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﮐﯿﺎ ﺍﺱ ﺭﻭﯾﺌﮯ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﭘﺮ ﺁﭖ ﭘﻮﺭﯼ ﺟﻤﺎﻋﺖ ﮐﻮ ﻣﻮﺭﺩﺍﻟﺰﺍﻡ ﭨﮭﮩﺮﺍ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ؟ ﯾﮧ ﺗﻮ ﻭﮨﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﻮﺋﯽ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﮐﺴﯽ ﻣﺰﺍﺭ ﭘﺮ ﻟﻮﮒ ﭼﺮﺱ ﭘﯽ ﺭﮨﮯ ﮨﻮﮞ ﺗﻮ ﺁﭖ ﭘﻮﺭﯼ ﺍﻣﺖ ﭘﺮ ﭼﺮﺳﯽ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﺎ ﺍﻟﺰﺍﻡ ﺩﮬﺮ ﺩﯾﮟ۔
3 ۔ ﺍﮔﺮ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﺍﻧﺼﺎﻑ ﮐﮯ ﮐﺴﯽ ﺳﭙﻮﺭﭨﺮ ﮐﻮ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮐﻠﺜﻮﻡ ﻧﻮﺍﺯ ﮐﯽ ﺑﯿﻤﺎﺭﯼ ﺍﺗﻨﯽ ﺳﻨﺠﯿﺪﮦ ﻧﻮﻋﯿﺖ ﮐﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺘﻨﺎ ﺗﺎﺛﺮ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺑﺮﺍﺋﯽ ﮨﮯ؟ ﮐﯿﺎ ﮐﻠﺜﻮﻡ ﻧﻮﺍﺯ ﺣﺎﻟﯿﮧ ﺍﺳﻤﺒﻠﯽ ﮐﯽ ﺍﯾﻢ ﺍﯾﻦ ﺍﮮ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﯽ؟ ﮐﯿﺎ ﺑﻄﻮﺭ ﺳﯿﺎﺳﺘﺪﺍﻥ، ﻋﻮﺍﻡ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮐﻨﮉﮐﭧ ﮐﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﺣﻖ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮐﮭﺘﮯ؟ ﯾﮧ ﻭﮨﯽ ﺍﺻﻮﻝ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﭘﺮ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﮯ ﺗﻮ ﺍﯾﺎﻡ ﻣﺨﺼﻮﺻﮧ ﮐﯽ ﮔﻨﺘﯽ ﺑﮭﯽ ﺳﺮﻋﺎﻡ ﮨﺮ ﭘﭩﻮﺍﺭﯼ ﮐﺮﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﺍﺧﻼﻗﯿﺎﺕ ﯾﺎﺩ ﻧﮧ ﺁﺋﯿﮟ، ﺍﺏ ﺍﮔﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﻠﺜﻮﻡ ﻧﻮﺍﺯ ﮐﯽ ﺑﯿﻤﺎﺭﯼ ﮐﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺍﺧﻼﻗﯿﺎﺕ ﮐﯽ ﻣﺘﻠﯽ ﮐﯿﻮﮞ ﺍﭨﮭﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﮔﺌﯽ؟
4 ۔ ﺍﮔﺮ ﺁﭖ ﮐﺎ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﺳﯿﺎﺳﺘﺪﺍﻥ ﺳﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﻋﻮﺭﺕ ﺫﺍﺕ ﺳﮯ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺁﭖ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﮐﻠﺜﻮﻡ ﻧﻮﺍﺯ ﭼﺎﮨﮯ ﮈﺭﺍﻣﮧ ﮐﺮﺭﮨﯽ ﮨﻮ، ﺍﺳﮯ ﺑﻄﻮﺭ ﻋﻮﺭﺕ ﮨﻤﯿﮟ ﻣﻮﺿﻮﻉ ﺑﺤﺚ ﻧﮩﯿﮟ ﻻﻧﺎ ﭼﺎﮨﯿﺌﮯ ﺗﻮ ﭼﻨﺪ ﻣﺎﮦ ﻗﺒﻞ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﺑﺸﺮﯼ ﺻﺎﺣﺒﮧ ﮐﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﺍﭘﻨﯽ ﮨﯽ ﭘﻮﺳﭩﺲ ﺍﻭﺭ ﺧﯿﺎﻻﺕ ﮐﻮ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﭘﮍﮪ ﻟﯿﮟ۔ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻃﻼﻕ ﺳﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺍﯾﺎﻡ ﺣﯿﺾ ﺍﻭﺭ ﺗﯿﺴﺮﯼ ﺷﺎﺩﯼ ﺗﮏ، ﺁﭖ ﻧﮯ ﮐﯿﺴﯽ ﮐﯿﺴﯽ ﻏﻼﻇﺘﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﺳﮯ ﺑﯿﺎﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﮟ۔ ﺭﻋﺎﯾﺖ ﺍﻟﻠﮧ ﻓﺎﺭﻭﻗﯽ ﺳﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ ﻋﻄﺎ ﺍﻟﺤﻖ ﻗﺎﺳﻤﯽ ﺗﮏ، ﺍﻥ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻃﻔﯿﻠﺌﮯ، ﺣﺎﻓﻆ، ﻣﻮﻟﻮﯼ، ﺷﺎﮦ ﺟﯽ، ﻣﻮﻻﻧﺎ، ﻗﺎﺭﯼ، ﭘﯿﺮ، ﺻﺎﺣﺒﺰﺍﺩﮮ، ﭼﻮﮨﺪﺭﯼ ۔ ۔ ﺍﻟﻐﺮﺽ ﺟﺲ ﺟﺲ ﮐﮯ ﭘﯿﭧ ﻣﯿﮟ ﻟﻘﻤﮧ ﺣﺮﺍﻡ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺗﮭﺎ، ﻭﮦ ﺑﺸﺮﯼ ﮐﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﺑﻐﺾ ﮐﮯ ﮈﮐﺎﺭ ﻟﯿﺘﺎ ﺭﮨﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺧﻼﻗﯿﺎﺕ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﯾﺎﺩ ﻧﮧ ﺁﺋﯽ۔ ﺍﮔﺮ ﻭﮦ ﺳﺐ ﺟﺎﺋﺰ ﺗﮭﺎ ﺗﻮ ﯾﮧ ﺳﺐ ﻧﺎﺟﺎﺋﺰ ﮐﯿﺴﮯ؟
ﺍﮔﺮ ﺁﭖ ﯾﮧ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻋﻮﺭﺕ ﺫﺍﺕ ﮐﺎ ﺍﺣﺘﺮﺍﻡ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺍﮨﻞ ﺧﺎﻧﮧ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ، ﯾﻌﻨﯽ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﺳﮯ ﺗﻌﻠﻖ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺧﻮﺍﺗﯿﻦ ﮐﻮ ﺗﻮ ﺁﭖ ﭼﺎﮨﮯ ﮔﺎﻟﯿﺎﮞ ﺩﯾﮟ، ﺍﻥ ﮐﯽ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﮐﺸﯽ ﮐﺮﯾﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﻧﻮﺍﺯﺷﺮﯾﻒ ﮐﮯ ﺍﮨﻞ ﺧﺎﻧﮧ ﮐﯽ ﻋﺰﺕ ﻣﻘﺪﺱ ﮨﺴﺘﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺳﻤﺠﮫ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮐﮧ ﺁﭖ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﻟﻘﻤﮧ ﺣﺮﺍﻡ ﺍﺏ ﺗﺤﻠﯿﻞ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺁﭖ ﮐﯽ ﺭﮔﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﮌﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺧﻮﻥ ﮐﺎ ﺣﺼﮧ ﺑﻦ ﭼﮑﺎ ﺍﻭﺭ ﺟﻮ ﺑﺎﻗﯽ ﺑﭽﺎ، ﻭﮦ ﺁﭖ ﮐﮯ ﺩﻣﺎﻍ ﮐﻮ ﭘﯿﻐﺎﻡ ﺭﺳﺎﻧﯽ ﮐﯽ ﻗﻮﺕ ﭘﮩﻨﭽﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﭘﯿﭽﻮﭨﺮﯼ ﮔﻠﯿﻨﮉﺯ ﮐﺎ ﺧﻠﯿﮧ ﺑﻦ ﭼﮑﺎ۔
ﺍﺏ ﺍﮔﺮ ﺁﭖ ﮐﺎ ﺩﻣﺎﻍ ﮨﺮ ﻭﻗﺖ ﺻﺮﻑ ﻧﻮﺍﺯﺷﺮﯾﻒ ﮐﯽ ﺣﺮﺍﻣﺰﺩﮔﯿﻮﮞ ﮐﺎ ﺩﻓﺎﻉ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﻗﺼﻮﺭ ﮐﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺍﺱ ﻟﻘﻤﮧ ﺣﺮﺍﻡ ﮐﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺟﺎﻧﮯ ﺍﻧﺠﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﭘﮩﻨﭻ ﮐﺮ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺣﺮﺍﻣﺰﺍﺩﮦ ﺑﻨﺎ ﭼﮑﺎ۔
ﮐﻠﺜﻮﻡ ﻧﻮﺍﺯ ﺳﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ ﻓﺮﯾﺎﻝ ﺗﺎﻟﭙﻮﺭ ﺗﮏ، ﻣﺮﯾﻢ ﻧﻮﺍﺯ ﺳﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺁﺻﻔﮧ ﺯﺭﺩﺍﺭﯼ ﺗﮏ، ﮨﺮ ﺍﯾﮏ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﮐﺮﭘﺸﻦ ﭘﺮ ﺳﻮﺍﻝ ﮨﻮﮔﺎ، ﮨﻢ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﮯ، ﮐﺮﺗﮯ ﺭﮨﯿﮟ ﮔﮯ ۔ ۔ ۔ ۔ ﺭﻭﮎ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺭﻭﮎ ﻟﻮ ۔ ۔ ۔ ﯾﮧ ﺟﻨﮓ ﺣﻼﻝ ﺍﻭﺭ ﺣﺮﺍﻡ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﮨﮯ، ﮨﻢ ﺣﻖ ﭘﺮ ﮨﯿﮟ ﯾﻌﻨﯽ ﺣﻼﻝ ﺭﺳﺘﮯ ﭘﺮ۔ ۔ ۔ ۔ ﺗﻢ ﻣﺨﺎﻟﻒ ﺳﻤﺖ ﮐﮭﮍﮮ ﮨﻮ، ﯾﻌﻨﯽ ﺣﺮﺍﻡ ﺭﺳﺘﮯ ﭘﺮ۔ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺫﻟﺖ ﮨﮯ، ﺭﺳﻮﺍﺋﯽ ﮨﮯ ۔ ۔ ۔ ﯾﮩﯽ ﮐﭽﮫ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﻮﺭﮨﺎ ﮨﮯ، ﯾﮩﯽ ﮐﭽﮫ ﺍﻥ ﺷﺎ ﺍﻟﻠﮧ ﮨﻮﺗﺎ ﺭﮨﮯ ﮔﺎ !!! 

Comments

Popular posts from this blog

Azeem solved past papers for FSc chemistry part 2

Azeem past papers and books by Azeem group of acadmeis are the best books for learning and teaching as well Azeem chemistry of Fsc part 2 are very good guide which include past paers of punjab boards include Ajk and etc Azeem past papers are the best papers ever i see both in quality and quantity I really suggest the students to bye Azeem past solved papers for good result 










Best Urdu paper presentation for Matric and Fsc students

Urdu paper need more presentation to get good marks in it there for irdu paper presentation is very important for all matric and inter students specially for Fsc students sp here is the best urdu presentation for the matric and inter and Fsc students








قد کو کیسے بڑھایا جایا کیا خوارک لی جائے اور کیا ورزش کی جائے

اج کل کے نوجوان طبقہ میں ایک چیز کو بہت زیادہ اہمیت دی جارہی ہے اور وہ ہے قد کہ قد کو کیسے بڑھایا جایا اج ہم اس موضوع پر بات کریں گے اور دیکھیں گے کہ قد میں کونسی چیزیں زیادہ اہمیت کے حامل ہے اور قد کو کس طرح بڑھایا جا سکتا ہے
بڑے قد کی اہمیت
یہ بات تو طے ہے کہ لمبا قد  ایک اچھی نوید ہے لمبے قد والے کو زیادہ پذیرائی ملتی ہے اور وہ زیادہ نمایاں طور پر ابھرتا ہے اسکو سرکاری نوکری جیسے کہ پولیس فوج یا دوسرے اداروں میں نوکری کے حصول میں زیادہ مشکلات پیش نہیں اتی اور خصوصا لڑکیاں کو بھی بڑے قد کا شہزادہ ہی چاہئے ہوتا ہے😂😂😂 بہر لمبے قد کی افادیت بھی ہے اور نقصان بھی
لمبے قد کے نقصانات 
لمبے قد کے اگرچہ فائدے بہت زیادہ ہے مگر اسکے نقصانات بھی اتنے ہی زیادہ ہے عموما لمبے قد والوں کو خاصی تکلیف پیش اتی ہے کہ وہ اپنی لمبی لمبی ٹانگیں کیسے سمیٹ کر بیٹھے اور کیسے سکون کے ساتھ وقت گزارے اسکےعلاوہ اگر قد لمبا ہو مگر بندہ خود پتلا ہو تو اسکا بہت زیادہ مزاق اڑایا جاتا ہے
مناسب قد کتنا ہونا چاہئے
ماہرین کے مطابق مناسب قد زیادہ سے زیادہ ساڑھے چھ انچ ہو اور کم سے کم ساڑھے پانچ انچ ہونا چاپئے اس سے زیاد…