Skip to main content

کلبھوشن یادیو کا قصہ و معاملہ

ﻋﺮﺍﻕ ﺟﻨﮓ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺟﻮ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﻗﯿﺪﯼ ﺑﻨﺎﺋﮯ ﮔﺌﮯ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺍﺑﻮ ﻏﺮﯾﺐ ﻧﺎﻣﯽ ﺍﯾﮏ ﺷﮩﺮ ﮐﯽ ﺟﯿﻞ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯿﺞ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ۔ ﯾﮧ ﺷﮩﺮ ﺑﻐﺪﺍﺩ ﺳﮯ ﻣﻐﺮﺏ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﻗﻊ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺟﯿﻞ ﮐﻮ " ﺍﺑﻮﻏﺮﯾﺐ ﺟﯿﻞ " ﺑﮭﯽ ﮐﮩﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔
ﺍﭘﺮﯾﻞ 2004 ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺍﻣﺮﯾﮑﯽ ﻧﺸﺮﯾﺎﺗﯽ ﺍﺩﺍﺭﮮ ﻧﮯ ﭘﮩﻠﯽ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺍﺑﻮﻏﺮﯾﺐ ﺟﯿﻞ ﮐﯽ ﻭﮦ ﺗﺼﺎﻭﯾﺮ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﭘﯿﺶ ﮐﯿﮟ ﺟﻨﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﭘﻮﺭﯼ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺍﻣﺮﯾﮑﮧ ﮐﯽ ﺟﻤﮩﻮﺭﯼ ﺍﻭﺭ ﺍﺧﻼﻗﯽ ﺍﻗﺪﺍﺭ ﮐﺎ ﭘﻮﻝ ﮐﮭﻮﻝ ﮐﮯ ﺭﮐﮫ ﺩﯾﺎ۔ ﺍﻥ ﺗﺼﺎﻭﯾﺮ ﻣﯿﮟ ﺩﮐﮭﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﮐﮧ ﮐﯿﺴﮯ ﻇﺎﻟﻢ ﺍﻣﺮﯾﮑﯽ ﻓﻮﺟﯿﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﺳﻼﻡ ﭘﺴﻨﺪﻭﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﻏﯿﺮﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﺳﻠﻮﮎ ﺭﻭﺍ ﺭﮐﮭﺎ۔
ﺍﻥ ﻗﯿﺪﯾﻮﮞ ﭘﺮ ﮐﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌﺍ ﮔﯿﺎ، ﺍﻥ ﮐﮯ ﻧﺎﺧﻨﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﮐﮭﯿﮍ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ، ﺍﻥ ﮐﻮ ﺑﺮﮨﻨﮧ ﺣﺎﻟﺖ ﻣﯿﮟ ﺍﻟﭩﺎ ﭨﺎﻧﮓ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ، ﮐﺌﯽ ﺍﯾﺴﯽ ﺗﺼﺎﻭﯾﺮ ﺗﮭﯽ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﻗﯿﺪﯾﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﺮﮨﻨﮧ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺍﻥ ﭘﺮ ﮔﻨﺪﮔﯽ ﺍﻧﺪﯾﻠﯽ ﮔﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﻣﺮﮮ ﮐﻮ ﻣﺎﺭﮮ ﺷﺎﮦ ﻣﺪﺍﺭ ﮐﮯ ﻣﺼﺪﺍﻕ ﺍﻥ ﺯﺧﻤﻮﮞ ﺳﮯ ﭼﻮﺭ ﺍﻭﺭ ﻟﮩﻮ ﺑﮩﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﻗﯿﺪﯾﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﻣﺮﯾﮑﯽ ﻓﻮﺟﯽ thumbs up ﺑﻨﺎ ﮐﺮ ﺗﺼﻮﯾﺮﯾﮟ ﮐﮭﻨﭽﻮﺍﺗﮯ ﺭﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﺟﯿﻞ ﻣﯿﮟ ﺑﺎﺭﯾﺶ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﭘﺮ ﺍﯾﺴﮯ ﺍﯾﺴﮯ ﻣﻈﺎﻟﻢ ﮐﮯ ﭘﮩﺎﮌ ﺗﻮﮌﮮ ﮔﺌﮯ ﮐﮧ ﺍﻧﺴﺎﻧﯿﺖ ﺷﺮﻣﺎ ﺍﭨﮭﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻗﻮﺍﻡِ ﻋﺎﻟﻢ ﮐﺎ ﺿﻤﯿﺮ ﻧﮧ ﮐﺎﻧﭙﺎ۔
ﺑﮭﺎﺭﺕ ﻣﯿﮟ 1971 ﻣﯿﮟ ﺟﺐ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﺟﻨﮕﯽ ﻗﯿﺪﯾﻮﮞ ﮐﻮ ﻻﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﺍﻥ ﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﻣﻈﺎﻟﻢ ﮐﮯ ﭘﮩﺎﮌ ﺗﻮﮌ ﺩﯾﮯ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺟﺐ ﯾﮧ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﻣﻌﺎﮨﺪﮮ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻭﻃﻦ ﻭﺍﭘﺲ ﻟﻮﭨﮯ ﺗﻮ ﮐﺌﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﮔﻨﻮﺍ ﭼﮑﮯ ﺗﮭﮯ، ﮐﺌﯽ ﭨﺎﻧﮕﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﻌﺬﻭﺭ ﮨﻮ ﭼﮑﮯ ﺗﮭﮯ، ﮐﺌﯽ ﺳﭙﺎﮨﯽ ﺫﮨﻨﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻣﻔﻠﻮﺝ ﮨﻮ ﭼﮑﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺍﻟﻐﺮﺽ ﮐﮧ ﺍﻧﺴﺎﻧﯿﺖ ﻧﮯ ﺷﺮﻣﻨﺎﮎ ﻣﻨﺎﻇﺮ ﺩﯾﮑﮭﮯ۔
ﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭ ﺧﻄﮯ ﮐﯽ ﮐﮩﺎﻧﯽ ﺳﻨﺎﺗﺎ ﮨﻮﮞ۔ ﺩﻝ ﺗﮭﺎﻡ ﮐﺮ ﺳﻨﯿﮯ ﮔﺎ
3 ﻣﺎﺭﭺ 2016 ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﺑﮭﺎﺭﺗﯽ ﻧﯿﻮﯼ ﮐﺎ ﮐﻤﺎﻧﮉﺭ ﺟﺎﺳﻮﺳﯽ ﮐﮯ ﺍﻟﺰﺍﻡ ﻣﯿﮟ ﺑﻠﻮﭼﺴﺘﺎﻥ ﺳﮯ ﮔﺮﻓﺘﺎﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﺳﺎﻝ ﮐﯽ ﻣﮑﻤﻞ ﺗﺤﻘﯿﺎﺕ ﺍﻭﺭ ﻣﻠﭩﺮﯼ ﻋﺪﺍﻟﺖ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺲ ﭼﻠﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺗﻤﺎﻡ ﺛﺒﻮﺗﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺍﻋﺘﺮﺍﻓﺎﺕ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮐﻤﺎﻧﮉﺭ ﮐﻠﺒﻮﺷﻦ ﯾﺎﺩﯾﻮ ﻋﺮﻑ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﺣﺴﯿﻦ ﭘﭩﯿﻞ ﮐﻮ 10 ﺍﭘﺮﯾﻞ 2017 ﻣﯿﮟ ﺳﺰﺍﺋﮯ ﻣﻮﺕ ﺳﻨﺎﺋﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ۔
ﺳﺰﺍﺋﮯ ﻣﻮﺕ ﺳﻨﺎﺋﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﮐﭽﮫ ﻋﺮﺻﮧ ﺑﻌﺪ ﮐﻠﺒﻮﺷﻦ ﯾﺎﺩﯾﻮ ﻧﮯ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﺍﻋﻠﯽٰ ﺣﮑﺎﻡ ﺳﮯ ﺩﺭﺧﻮﺍﺳﺖ ﮐﯽ ﮐﮧ ﺍﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﮞ ﺳﮯ ﻣﻠﻨﮯ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ۔ ﺟﺲ ﭘﺮ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﺣﮑﺎﻡ ﻧﮯ 10 ﻧﻮﻣﺒﺮ 2017 ﮐﻮ ﯾﮧ ﺍﻋﻼﻥ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮐﻠﺒﻮﺷﻦ ﯾﺎﺩﯾﻮ ﮐﯽ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﺎﮞ ﺍﻭﺭ ﺑﯿﻮﯼ ﺳﮯ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﮐﺮﻭﺍﺋﯽ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ۔
ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﮐﻞ ﯾﻌﻨﯽ 25 ﺩﺳﻤﺒﺮ ﮐﻮ ﺩﻓﺘﺮِ ﺧﺎﺭﺟﮧ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺋﯽ۔ ﺍﺱ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﮐﺎ ﺩﻭﺭﺍﻧﯿﮧ ﻭﻋﺪﮦ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﻭﻗﺖ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﮭﺎ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﮐﮯ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﻧﮯ ﻧﮩﺎﯾﺖ ﺗﺴﻠﯽ ﺳﮯ ﺑﺎﺕ ﭼﯿﺖ ﮐﯽ۔ ﺍﺱ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﮐﻠﻮﺑﻮﺷﻦ ﯾﺎﺩﯾﻮ ﮐﯽ ﻣﺎﮞ ﻧﮯ ﺑﺎﺭ ﺑﺎﺭ ﯾﮧ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﯿﺎ ﮐﮧ ﮐﯿﺎ ﺗﻢ ﭘﺮ ﮐﺴﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﺎ ﺗﺸﺪﺩ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ ﯾﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﮐﻠﺒﻮﺷﻦ ﻧﮯ ﺑﺎﺭ ﺑﺎﺭ ﯾﮩﯽ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﻣﺠﮫ ﭘﺮ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﺳﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺗﺸﺪﺩ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺍ۔
ﺍﺱ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮐﻠﺒﻮﺷﻦ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﻭﯾﮉﯾﻮ ﭘﯿﻐﺎﻡ ﺭﯾﮑﺎﺭﮈ ﮐﺮﻭﺍﯾﺎ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﭘﮭﺮ ﺳﮯ ﺩﻭ ﭨﻮﮎ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺎ " ﻣﯿﮟ ﺑﮭﺎﺭﺗﯽ ﻧﯿﻮﻝ ﺁﻓﯿﺴﺮ ﮨﻮﮞ۔ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﻠﻮﭼﺴﺘﺎﻥ ﺳﮯ ﭘﮑﮍﺍ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﺍﻋﺘﺮﺍﻑ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﺣﮑﺎﻡ ﻧﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﻋﺰﺕ ﺍﻭﺭ ﺍﺣﺘﺮﺍﻡ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺑﺮﺗﺎﺅ ﮐﯿﺎ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﺣﻘﻮﻕ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﭘﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺎﮞ ﺍﻭﺭ ﺑﯿﻮﯼ ﺳﮯ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﮐﯽ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﮐﺎ ﺍﻇﮩﺎﺭ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﺲ ﮐﻮ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﺣﮑﺎﻡ ﻧﮯ ﭘﻮﺭﺍ ﮐﯿﺎ، ﺟﺲ ﭘﺮ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﺎ ﺩﻝ ﺳﮯ ﺷﮑﺮﯾﮧ ﺍﺩﺍ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﻮﮞ " ۔
ﻗﺎﺭﺋﯿﻦ ﻣﺤﺘﺮﻡ : ﯾﮧ ﮐﻠﺒﻮﺷﻦ ﯾﺎﺩﯾﻮ ﮐﺌﯽ ﺳﺎﻝ ﺗﮏ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﺳﻮﺳﯽ ﺍﻭﺭ ﺩﮨﺸﺖ ﮔﺮﺩﯼ ﮐﺮﺗﺎ ﺭﮨﺎ۔ ﺍﮔﺮ ﭘﺎﮐﺴﺎﻧﯽ ﻓﻮﺝ ﭼﺎﮨﺘﯽ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﻮ ﻣﻨﻈﺮِ ﻋﺎﻡ ﭘﺮ ﻻﻧﮯ ﮐﯽ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﻣﺎﺭ ﺑﮭﯽ ﺳﮑﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﯾﮏ ﺩﺷﻤﻦ ﻣﻠﮏ ﮐﮯ ﺟﺎﺳﻮﺱ ﮐﻮ ﺳﺰﺍ ﺑﮭﯽ ﺩﯼ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻣﺮﺗﺒﮯ ﮐﺎ ﺑﮭﯽ ﺧﯿﺎﻝ ﺭﮐﮭﺎ ﮔﯿﺎ۔
ﺍﻣﺮﯾﮑﮧ، ﺑﮭﺎﺭﺕ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﮕﺮ ﻣﻤﺎﻟﮏ ﮐﺎ ﯾﮧ ﺣﺎﻝ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﺟﻤﮩﻮﺭﯼ، ﻣﮩﺬﺏ ﺍﻭﺭ ﺗﮩﺬﯾﺐ ﯾﺎﻓﺘﮧ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺟﻨﮕﯽ ﻗﯿﺪﯾﻮﮞ ﭘﺮ ﻭﮦ ﺍﻧﺴﺎﻧﯿﺖ ﺳﻮﺯ ﻣﻈﺎﻟﻢ ﮈﮬﺎﺋﮯ ﮐﮧ ﺍﻧﺴﺎﻧﯿﺖ ﺑﮭﯽ ﺷﺮﻣﺎ ﮔﺌﯽ ﺟﺐ ﮐﮧ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﮨﺎﺋﯽ ﭘﺮﻭﻓﺎﺋﻞ ﺟﺎﺳﻮﺱ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﭘﮑﮍﺍ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﻏﯿﺮ ﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﺳﻠﻮﮎ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ، ﺍﺱ ﭘﺮ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﺎ ﺟﺴﻤﺎﻧﯽ ﯾﺎ ﺫﮨﻨﯽ ﺗﺸﺪﺩ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ، ﺑﻠﮑﮧ ﺍﻧﺼﺎﻑ ﮐﮯ ﺗﻘﺎﺿﮯ ﺑﮭﯽ ﭘﻮﺭﮮ ﮐﯿﮯ ﺍﻭﺭ ﺣﺴﻦِ ﺳﻠﻮﮎ ﮐﺎ ﺑﮭﺮﻡ ﺑﮭﯽ ﻗﺎﺋﻢ ﺭﮐﮭﺎ۔
ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﯾﮩﯽ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﺩﯾﻦ ﺳﮑﮭﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺳﻼﻡ ﺑﮯ ﺷﮏ ﺍﻣﻦ، ﻣﺤﺒﺖ ﺍﻭﺭ ﺭﻭﺍﺩﺍﺭﯼ ﮐﺎ ﺩﯾﻦ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺁﺝ ﻣﺠﮭﮯ ﻓﺨﺮ ﮨﮯ ﮐﮧ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﻓﻮﺝ، ﺣﮑﺎﻡ ﺍﻭﺭ ﺩﻓﺘﺮ ﺧﺎﺭﺟﮧ ﻧﮯ ﮐﻠﺒﻮﺷﻦ ﯾﺎﺩﯾﻮ ﮐﮯ ﻣﻌﺎﻣﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﺳﻔﺎﺭﺗﮑﺎﺭﯼ ﺳﺮﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﯼ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﯽ ﭘﻮﺭﯼ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﭘﺬﯾﺮﺍﺋﯽ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﯾﮩﯽ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺍﺳﻼﻑ ﮐﯽ ﺭﻭﺍﯾﺎﺕ ﮨﯿﮟ، ﯾﮩﯽ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﭘﯿﺎﺭﮮ ﻧﺒﯽ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭ ﺁﻟﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﺎ ﻃﺮﯾﻘﮧ ﺗﮭﺎ، ﯾﮩﯽ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻋﻈﯿﻢ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺳﭙﮧ ﺳﺎﻻﺭﻭﮞ ﮐﺎ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﺗﮭﺎ۔ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﮐﮯ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﻣﻮﮌ ﭘﺮ ﺟﻨﮕﯽ ﻗﯿﺪﯾﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺑﺮﺍ ﺳﻠﻮﮎ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ۔ ﺍﻭﺭ ﺍﻓﻮﺍﺝِ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺛﺎﺑﺖ ﮐﯿﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﺳﻼﻑ ﮐﮯ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﭘﺮ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﮨﻢ ﺟﻨﮓ ﮐﮯ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﺭﻭﺍﯾﺎﺕ، ﺗﮩﺬﯾﺐ ﺍﻭﺭ ﺍﺧﻼﻗﯿﺎﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﮭﻮﻻ ﮐﺮﺗﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﮨﻢ ﺳﭽﮯ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﺗﮩﺬﯾﺐ ﯾﺎﻓﺘﮧ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﺑ

Comments

Popular posts from this blog

Azeem solved past papers for FSc chemistry part 2

Azeem past papers and books by Azeem group of acadmeis are the best books for learning and teaching as well Azeem chemistry of Fsc part 2 are very good guide which include past paers of punjab boards include Ajk and etc Azeem past papers are the best papers ever i see both in quality and quantity I really suggest the students to bye Azeem past solved papers for good result 










Best Urdu paper presentation for Matric and Fsc students

Urdu paper need more presentation to get good marks in it there for irdu paper presentation is very important for all matric and inter students specially for Fsc students sp here is the best urdu presentation for the matric and inter and Fsc students








قد کو کیسے بڑھایا جایا کیا خوارک لی جائے اور کیا ورزش کی جائے

اج کل کے نوجوان طبقہ میں ایک چیز کو بہت زیادہ اہمیت دی جارہی ہے اور وہ ہے قد کہ قد کو کیسے بڑھایا جایا اج ہم اس موضوع پر بات کریں گے اور دیکھیں گے کہ قد میں کونسی چیزیں زیادہ اہمیت کے حامل ہے اور قد کو کس طرح بڑھایا جا سکتا ہے
بڑے قد کی اہمیت
یہ بات تو طے ہے کہ لمبا قد  ایک اچھی نوید ہے لمبے قد والے کو زیادہ پذیرائی ملتی ہے اور وہ زیادہ نمایاں طور پر ابھرتا ہے اسکو سرکاری نوکری جیسے کہ پولیس فوج یا دوسرے اداروں میں نوکری کے حصول میں زیادہ مشکلات پیش نہیں اتی اور خصوصا لڑکیاں کو بھی بڑے قد کا شہزادہ ہی چاہئے ہوتا ہے😂😂😂 بہر لمبے قد کی افادیت بھی ہے اور نقصان بھی
لمبے قد کے نقصانات 
لمبے قد کے اگرچہ فائدے بہت زیادہ ہے مگر اسکے نقصانات بھی اتنے ہی زیادہ ہے عموما لمبے قد والوں کو خاصی تکلیف پیش اتی ہے کہ وہ اپنی لمبی لمبی ٹانگیں کیسے سمیٹ کر بیٹھے اور کیسے سکون کے ساتھ وقت گزارے اسکےعلاوہ اگر قد لمبا ہو مگر بندہ خود پتلا ہو تو اسکا بہت زیادہ مزاق اڑایا جاتا ہے
مناسب قد کتنا ہونا چاہئے
ماہرین کے مطابق مناسب قد زیادہ سے زیادہ ساڑھے چھ انچ ہو اور کم سے کم ساڑھے پانچ انچ ہونا چاپئے اس سے زیاد…