Skip to main content

کوکا کولا کی کامیابی پاکستان میں

ایم کیو ایم پاکستان میں
ﺩﻧﯿﺎ ﮐﯽ ﭼﻨﺪ ﺑﮍﯼ ﺍﻭﺭ ﭘﺮﺍﻧﯽ ' ﺭﺍﺋﯿﻮﻟﺮﯾﺰ ' ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ' ﺩﯼ ﮐﻮﻻ ﻭﺍﺭ ' ﺑﮭﯽ ﮬﮯ ﺟﻮ ﭘﯿﭙﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﻮﮐﺎ ﮐﻮﻻ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﺍﯾﮏ ﺻﺪﯼ ﺳﮯ ﭼﻞ ﺭﮨﯽ ﮬﮯ۔
ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﯾﮧ ﺟﻨﮓ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﺷﺪﺕ ﺳﮯ ﻟﮍﯼ ﮔﺌﯽ۔ 80 ﮐﯽ ﺩﮨﺎﺋﯽ ﺗﮏ ﭘﯿﭙﺴﯽ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ 70 ﻓﯿﺼﺪ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﻣﺎﺭﮐﯿﭧ ﺷﺌﯿﺮ ﺁﭼﮑﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﻮﮎ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ﻣﺎﺭﮐﯿﭧ ﺳﮯ ﺧﺘﻢ ﮨﻮﭼﮑﯽ ﺗﮭﯽ۔ 80 ﮐﯽ ﺩﮨﺎﺋﯽ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﭙﺴﯽ ﻧﮯ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ، ﻭﺳﯿﻢ ﺍﮐﺮﻡ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﺎﻡ ﻣﺸﮩﻮﺭ ﺳﯿﻠﯿﺒﺮﯾﭩﯿﺰ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﺷﺘﮩﺎﺭﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﻻﻧﮯ ﮐﺎ ﺳﻠﺴﻠﮧ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯿﺎ ﺟﻮ ﺍﮔﻠﯽ ﺩﻭ ﺩﮨﺎﺋﯿﻮﮞ ﺗﮏ ﺟﺎﺭﯼ ﺭﮨﺎ۔ ﺷﺎﮨﺪ ﺁﻓﺮﯾﺪﯼ ﺳﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ ﻭﻗﺎﺭﯾﻮﻧﺲ ﺗﮏ، ﺷﻌﯿﺐ ﻣﻠﮏ ﺳﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺷﻌﯿﺐ ﺍﺧﺘﺮ ﺗﮏ، ﺳﺐ ﻧﮯ ﭘﯿﭙﺴﯽ ﮐﯽ ﺑﮩﺘﯽ ﮔﻨﮕﺎ ﺳﮯ ﺩﻝ ﮐﮭﻮﻝ ﮐﺮ ﮨﺎﺗﮫ ﺩﮬﻮﺋﮯ۔ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﺭﮐﯿﭩﻨﮓ ﮐﯽ ﺟﻨﮓ ﭘﯿﭙﺴﯽ ﻧﮯ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﻭﺍﺿﺢ ﻣﺎﺭﺟﻦ ﺳﮯ ﺟﯿﺘﯽ، ﺟﺲ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﯾﮧ ﺍﭘﻨﺎ ﻣﺎﺭﮐﯿﭧ ﺷﺌﯿﺮ ﺭﯾﭩﯿﻦ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻣﯿﺎﺏ ﺭﮨﯽ۔

ﭘﯿﭙﺴﯽ ﻧﮯ ﯾﮧ ﺟﻨﮓ ﺟﯿﺘﻨﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﮐﭽﮫ ﺍﻭﺭ ﺑﮭﯽ ﺣﺮﺑﮯ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺌﮯ۔ ﯾﮧ ﺣﺮﺑﮯ ﻣﻨﻔﯽ ﺗﮭﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺭﺯﻟﭧ ﭘﯿﭙﯿﺴﯽ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﻣﺜﺒﺖ ﺭﮨﺎ۔ 80 ﮐﯽ ﺩﮨﺎﺋﯽ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻻﺯ ﺷﯿﺸﮯ ﮐﯽ ﺭﯾﮕﻮﻟﺮ ﺑﻮﺗﻠﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺩﺳﺘﯿﺎﺏ ﮨﻮﺍ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺷﯿﺸﮯ ﮐﯽ ﺍﺱ ﺧﺎﻟﯽ ﺑﻮﺗﻞ ﮐﯽ ﻗﯿﻤﺖ 5 ﺭﻭﭘﮯ ﮨﻮﺍ ﮐﺮﺗﯽ ﺗﮭﯽ ﺟﻮ ﺍﮔﺮ ﮐﺴﯽ ﮔﺎﮨﮏ ﺳﮯ ﯾﺎ ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﺳﮯ ﭨﻮﭦ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﮐﻤﭙﻨﯽ ﻭﺍﻟﮯ ﯾﮧ ﺭﻗﻢ ﻭﺻﻮﻝ ﮐﺮﻟﯿﺘﮯ۔ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺷﯿﺸﮯ ﮐﯽ ﺑﻮﺗﻞ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺻﺮﻑ ﺩﻭ ﮨﯽ ﺑﮍﯼ ﮐﻤﭙﻨﯿﺎﮞ ﮨﻮﺍ ﮐﺮﺗﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﺟﻮ ﭘﯿﭙﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﻮﮎ ﮐﻮ ﺳﭙﻼﺋﯽ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﺗﯿﮟ۔
ﭘﯿﭙﺴﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﺳﯿﻠﺰ ﭨﯿﻤﻮﮞ ﮐﻮ ﭼﯿﮏ ﺑﮏ ﺍﻭﺭ ﮐﯿﺶ ﺳﮯ ﺑﮭﺮﮮ ﺗﮭﯿﻠﮯ ﭘﮑﮍﺍﺗﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺑﮭﯿﺞ ﺩﯾﺘﮯ۔ ﯾﮧ ﺳﯿﻠﺰ ﭨﯿﻤﯿﮟ ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭﻭﮞ ﺳﮯ ﮐﻮﮎ ﮐﯽ ﺧﺎﻟﯽ ﺑﻮﺗﻠﯿﮟ 10 ﺭﻭﭘﮯ ﮐﯽ ﺧﺮﯾﺪ ﻟﯿﺘﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﻭﮦ ﺑﻮﺗﻠﯿﮟ ﺗﻮﮌ ﺩﯾﺘﮯ۔ ﯾﻮﮞ ﺍﺱ ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﭘﺮ ﺍﯾﮏ ﻧﻔﺴﯿﺎﺗﯽ ﺍﺛﺮ ﺑﮭﯽ ﭘﮍﺗﺎ ﮐﮧ ﺷﺎﯾﺪ ﻭﮦ ﮐﻮﮎ ﮐﯽ ﺷﮑﻞ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﮔﮭﭩﯿﺎ ﺑﺮﺍﻧﮉ ﺭﮐﮫ ﺭﮨﺎ ﮬﮯ۔ ﺟﺐ ﮐﻮﮎ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺁﮐﺮ ﺧﺎﻟﯽ ﺑﻮﺗﻠﻮﮞ ﮐﺎ ﻣﻄﺎﻟﺒﮧ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺩﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﺍﻧﮩﯿﮟ 5 ﺭﻭﭘﮯ ﻓﯽ ﺑﻮﺗﻞ ﮐﮯ ﺣﺴﺎﺏ ﺳﮯ ﺩﮮ ﺩﯾﺘﺎ ﺍﻭﺭ 5 ﺭﻭﭘﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﯿﺐ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﻝ ﻟﯿﺘﺎ۔
ﭼﻨﺪ ﮨﻔﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺍﻧﺪﺭ ﮐﻮﮎ ﮐﯽ 70 ﻓﯿﺼﺪ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺧﺎﻟﯽ ﺑﻮﺗﻠﯿﮟ ﭘﯿﭙﺴﯽ ﻭﺍﻟﮯ ﺗﻮﮌ ﭼﮑﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻣﻘﺼﺪ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﺮﻭﮌﻭﮞ ﮐﺎ ﺑﺠﭧ ﻟﮕﺎ ﺩﯾﺎ۔ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﭘﯿﭙﺴﯽ ﻧﮯ ﺷﯿﺸﮯ ﮐﯽ ﺑﻮﺗﻠﯿﮟ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﮐﻤﭙﻨﯿﺎﮞ ﺧﺮﯾﺪ ﻟﯿﮟ ﺟﻮ ﺍﺏ ﺭﯾﺎﺽ ﺑﺎﭨﻠﺮﺯ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﺟﺎﻧﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻏﺎﻟﺒﺎً ﮨﻤﺎﯾﻮﮞ ﺍﺧﺘﺮ ﺍﻭﺭ ﮨﺎﺭﻭﻥ ﺍﺧﺘﺮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻣﺎﻟﮑﺎﻥ ﮨﯿﮟ۔
ﺟﺐ ﮐﻮﮎ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺧﺎﻟﯽ ﺑﻮﺗﻠﯿﮟ ﻣﻠﻨﺎ ﺑﻨﺪ ﮨﻮﮔﺌﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻧﺌﯽ ﺑﻮﺗﻠﯿﮟ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﮐﻤﭙﻨﯽ ﻧﮯ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺳﭙﻼﺋﯽ ﺩﯾﻨﮯ ﺳﮯ ﺍﻧﮑﺎﺭ ﮐﺮﺩﯾﺎ ﺗﻮ ﺁﭨﻮﻣﯿﭩﮑﻠﯽ ﺍﻥ ﮐﺎ ﻣﺎﺭﮐﯿﭧ ﺷﺌﯿﺮ ﻧﯿﭽﮯ ﺁﮔﯿﺎ۔ ﯾﻮﮞ 80 ﮐﯽ ﺩﮨﺎﺋﯽ ﺳﮯ ﭘﯿﭙﺴﯽ ﻣﺎﺭﮐﯿﭧ ﻟﯿﮉﺭ ﺑﻦ ﮔﯿﺎ۔
2000 ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮐﻮﮎ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺳﭩﺮﯾﭩﯿﺠﯽ ﮐﻮ ﺭﯾﻮﺍﺋﯿﻮ ﮐﯿﺎ۔ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺷﯿﺸﮯ ﮐﯽ ﺑﻮﺗﻠﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﻠﮯ ﻣﯿﮟ 350 ﺍﻭﺭ 500 ﻣﻠﯽ ﻟﭩﺮ ﮐﯽ ﭘﻼﺳﭩﮏ ﮐﯽ ﮈﺳﭙﻮﺯﯾﺒﻞ ﺑﻮﺗﻠﯿﮟ ﻣﺘﻌﺎﺭﻑ ﮐﺮﻭﺍﺋﯿﮟ۔۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻓﻠﯿﻮﺭ ﮐﯽ ﮐﻮﺍﻟﭩﯽ ﺑﮭﯽ ﺑﮩﺘﺮ ﮐﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﻣﭩﮭﺎﺱ ﮐﻢ ﮐﺮﮐﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺗﯿﺰﯼ ﻣﯿﮟ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮐﯿﺎ۔
ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﻮﮎ ﻧﮯ ﺟﻮ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﺍ ﺑﺮﯾﮏ ﺗﮭﺮﻭ ﺳﭩﯿﭗ ﻟﯿﺎ، ﻭﮦ ﺗﮭﺎ ﮐﻮﮎ ﺳﭩﻮﮈﯾﻮ ﮐﺎ ﻗﯿﺎﻡ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﭘﻮﭖ ﺍﻭﺭ ﮐﻼﺳﯿﮑﻞ ﻣﯿﻮﺯﮎ ﮐﻮ ﺭﯼ ﭘﺮﻭﮈﯾﻮﺱ ﮐﺮﮐﮯ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﻧﺴﻞ ﻣﯿﮟ ﻣﻘﺒﻮﻝ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ۔ ﮐﻮﮎ ﺳﭩﻮﮈﯾﻮ ﮐﮯ ﺯﺭﯾﻌﮯ ﮐﻮﮎ ﻧﮯ ﭘﻮﺭﯼ ﯾﻮﺗﮫ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﺎ ﮔﺮﻭﯾﺪﮦ ﺑﻨﺎ ﻟﯿﺎ۔
ﺍﺏ ﺣﺎﻝ ﮨﯽ ﻣﯿﮟ ' ﻇﺎﻟﻤﺎ ۔ ۔ ۔ ﮐﻮﮐﺎ ﮐﻮﻻ ﭘﻼ ﺩﮮ ' ﮐﺎ ﺍﺷﺘﮩﺎﺭ ﺁﯾﺎ ﮬﮯ ﺟﻮ ﺭﺍﺗﻮﮞ ﺭﺍﺕ ﻣﻘﺒﻮﻟﯿﺖ ﮐﯽ ﺑﻠﻨﺪﯾﻮﮞ ﭘﺮ ﭘﮩﻨﭻ ﮔﯿﺎ۔
ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﻋﺎﻟﻢ ﯾﮧ ﮬﮯ ﮐﮧ ﮐﻮﮎ ﮐﺎ ﻣﺎﺭﮐﯿﭧ ﺷﺌﯿﺮ 75 ﻓﯿﺼﺪ ﺳﮯ ﺍﻭﭘﺮ ﭘﮩﻨﭻ ﭼﮑﺎ ﮬﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﯿﭙﺴﯽ ﺳﮑﮍ ﮐﺮ 20 ﯾﺎ 22 ﻓﯿﺼﺪ ﺗﮏ ﺭﮦ ﮔﺌﯽ ﮬﮯ۔
ﺟﻮ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﭘﯿﭙﺴﯽ ﻧﮯ ﻣﻨﻔﯽ ﮨﺘﮭﮑﻨﮉﻭﮞ ﺳﮯ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ، ﻭﮦ ﮐﻮﮎ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺜﺒﺖ ﺳﭩﺮﯾﭩﯿﺠﯽ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻧﺎﻡ ﮐﺮﻟﯽ۔ ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﺭﺍﺋﯿﻮﻟﺮﯼ ﮬﮯ، ﮨﻮﺳﮑﺘﺎ ﮬﮯ ﭘﯿﭙﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﺍﺏ ﺑﺎﺅﻧﺲ ﺑﯿﮏ ﮐﺮﮮ ﺍﻭﺭ ﭼﻨﺪ ﺳﺎﻟﻮﮞ ﺑﻌﺪ ﻣﺎﺭﮐﯿﭧ ﺷﺌﯿﺮ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﭘﺎﺱ ﻟﮯ ﺟﺎﺋﮯ ۔ ۔ ۔
ﻟﯿﮑﻦ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﺭﻭﺯﺭﻭﺷﻦ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﻋﯿﺎﮞ ﮬﮯ ﮐﮧ ﻣﻨﻔﯽ ﮨﺘﮭﮑﻨﮉﮮ ﺻﺮﻑ ﻭﻗﺘﯽ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﺩﻻﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ ۔ ۔ ۔ ﻻﻧﮓ ﭨﺮﻡ ﺭﺯﻟﭩﺲ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﻣﺜﺒﺖ ﺳﻮﭺ ﺳﮯ ﮨﯽ ﻣﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ !!!

Comments

Popular posts from this blog

Azeem solved past papers for FSc chemistry part 2

Azeem past papers and books by Azeem group of acadmeis are the best books for learning and teaching as well Azeem chemistry of Fsc part 2 are very good guide which include past paers of punjab boards include Ajk and etc Azeem past papers are the best papers ever i see both in quality and quantity I really suggest the students to bye Azeem past solved papers for good result 










Best Urdu paper presentation for Matric and Fsc students

Urdu paper need more presentation to get good marks in it there for irdu paper presentation is very important for all matric and inter students specially for Fsc students sp here is the best urdu presentation for the matric and inter and Fsc students








قد کو کیسے بڑھایا جایا کیا خوارک لی جائے اور کیا ورزش کی جائے

اج کل کے نوجوان طبقہ میں ایک چیز کو بہت زیادہ اہمیت دی جارہی ہے اور وہ ہے قد کہ قد کو کیسے بڑھایا جایا اج ہم اس موضوع پر بات کریں گے اور دیکھیں گے کہ قد میں کونسی چیزیں زیادہ اہمیت کے حامل ہے اور قد کو کس طرح بڑھایا جا سکتا ہے
بڑے قد کی اہمیت
یہ بات تو طے ہے کہ لمبا قد  ایک اچھی نوید ہے لمبے قد والے کو زیادہ پذیرائی ملتی ہے اور وہ زیادہ نمایاں طور پر ابھرتا ہے اسکو سرکاری نوکری جیسے کہ پولیس فوج یا دوسرے اداروں میں نوکری کے حصول میں زیادہ مشکلات پیش نہیں اتی اور خصوصا لڑکیاں کو بھی بڑے قد کا شہزادہ ہی چاہئے ہوتا ہے😂😂😂 بہر لمبے قد کی افادیت بھی ہے اور نقصان بھی
لمبے قد کے نقصانات 
لمبے قد کے اگرچہ فائدے بہت زیادہ ہے مگر اسکے نقصانات بھی اتنے ہی زیادہ ہے عموما لمبے قد والوں کو خاصی تکلیف پیش اتی ہے کہ وہ اپنی لمبی لمبی ٹانگیں کیسے سمیٹ کر بیٹھے اور کیسے سکون کے ساتھ وقت گزارے اسکےعلاوہ اگر قد لمبا ہو مگر بندہ خود پتلا ہو تو اسکا بہت زیادہ مزاق اڑایا جاتا ہے
مناسب قد کتنا ہونا چاہئے
ماہرین کے مطابق مناسب قد زیادہ سے زیادہ ساڑھے چھ انچ ہو اور کم سے کم ساڑھے پانچ انچ ہونا چاپئے اس سے زیاد…