Skip to main content

عمران خان اسکی زندگی اور زندگی کے نشیب و فراز

ﺁﺝ ﺳﮯ 26 ﺳﺎﻝ ﭘﮩﻠﮯ 1992 ﻣﯿﮟ ﺁﺝ ﮐﮯ ﮨﯽ ﺩﻥ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﮐﯽ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻧﮯ ﮐﺮﮐﭧ ﮐﺎ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﺍ ﺍﯾﻮﻧﭧ ﻭﺭﻟﮉ ﮐﭗ ﺟﯿﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺟﮩﺎﮞ ﺍﺱ ﻭﺭﻟﮉ ﮐﭗ ﮐﯽ ﺟﯿﺖ ﮐﻮ ﮐﮭﯿﻞ ﺍﻭﺭ ﭘﺮﻭﻓﯿﺸﻨﻞ ﺍﺯﻡ ﮐﮯ ﺗﻨﺎﻇﺮ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﺭﮨﺎ ﻭﮨﯿﮟ ﭨﯿﻢ ﮐﮯ ﮐﭙﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﻗﺎﺋﺪﺍﻧﮧ ﺻﻼﺣﯿﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﭘﺮﮐﮭﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﺭﮨﺎ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﻣﯿﮟ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﺳﮯ ﺍﺱ ﺗﺎﺭﯾﺨﯽ ﺟﯿﺖ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﻣﻨﻔﺮﺩ ﻧﻘﻄﮧ ﻧﻈﺮ ﺳﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﺭﮨﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﻧﻘﻄﮧ ﻧﻈﺮ ﺗﮭﺎ ﺭﻭﺣﺎﻧﯽ ﻧﻘﻄﮧ ﻧﻈﺮ ۔۔۔۔ !! ﺷﺎﯾﺪ ﺁﭖ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺑﮩﺖ ﺳﺎﺭﮮ ﻟﻮﮒ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ ﮐﮧ ﺯﻣﺎﻧﮧ ﻃﺎﻟﺐ ﻋﻠﻤﯽ ﻣﯿﮟ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﮐﺎ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﺍﻋﺘﻘﺎﺩ ﻣﺬﮨﺐ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺳﺎﺋﯿﻨﺲ ﭘﺮ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺗﻔﺼﯿﻠﯽ ﺫﮐﺮ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﮐﺘﺎﺏ " ﻣﯿﺮﺍ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ " ﻣﯿﮟ ﮐﺮ ﺭﮐﮭﺎ ﮨﮯ۔ ﺟﻦ ﺩﻧﻮﮞ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﺁﮐﺴﻔﻮﺭﮈ ﻣﯿﮟ ﺯﯾﺮِ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺗﮭﮯ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺧﺪﺍ ﮐﯽ ﻟﮑﮭﯽ ﺗﻘﺪﯾﺮ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺧﻮﺩ ﮐﯽ ﺑﻨﺎﺋﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﻘﺪﯾﺮ ﭘﺮ ﯾﻘﯿﻦ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺬﮨﺐ، ﻋﺒﺎﺩﺕ ﺍﻭﺭ ﺩﻋﺎ ﭘﺮ ﺳﮯ ﺍﻥ ﮐﺎ ﯾﻘﯿﻦ ﮈﮔﻤﮕﺎﻧﮯ ﻟﮕﺎ ﺗﮭﺎ ﯾﺎ ﯾﻮﮞ ﮐﮩﮧ ﻟﯿﺠﯿﮯ ﮐﮧ ﺑﮩﺖ ﮨﯽ ﮐﻢ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺭﮦ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﮐﯽ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﯼ ﺧﻮﺑﯽ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﮑﻤﻞ ﺍﯾﻤﺎﻧﺪﺍﺭﯼ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﺎﻡ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﭘﺮﺧﻠﻮﺹ ﺍﻭﺭ ﻧﯿﮏ ﻧﯿﺖ ﮨﻮﻧﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﻧﮯ ﮐﺮﮐﭧ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﮨﻨﺮ ﺍﻭﺭ ﺻﻼﺣﯿﺘﻮﮞ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﺎ ﻧﺎﻡ ﺍﻭﺭ ﻣﻘﺎﻡ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ ﺗﮭﺎ، ﺍﻥ ﮐﺎ ﺷﻤﺎﺭ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﮐﺮﮐﭩﺮﺯ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﻧﮯ ﻟﮕﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ 1983 ﮐﮯ ﺷﺮﻭﻉ ﻣﯿﮟ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﺑﯿﮏ ﺍﻧﺠﺮﯼ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺑﮩﺖ ﻋﺮﺻﮧ ﺗﮏ ﮐﮭﯿﻞ ﮐﮯ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﺳﮯ ﺩﻭﺭ ﺭﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻭﺍﭘﺴﯽ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً 1985 ﮐﮯ ﺁﺧﺮ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺋﯽ۔ ﺍﺳﯽ ﻋﺮﺻﮯ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ 1985 ﻣﯿﮟ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﮐﯽ ﻭﺍﻟﺪﮦ ﻣﺤﺘﺮﻣﮧ ﺷﻮﮐﺖ ﺧﺎﻧﻢ ﺻﺎﺣﺒﮧ ﺟﻮ ﮐﮧ ﺑﮩﺖ ﻋﺮﺻﮯ ﺳﮯ ﮐﯿﻨﺴﺮ ﮐﯽ ﻣﺮﯾﻀﮧ ﺗﮭﯿﮟ، ﺍﻥ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻘﺎﻝ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ۔ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﮐﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﻭﺍﻟﺪﮦ ﺳﮯ ﺍﻧﺴﯿﺖ ﺍﻭﺭ ﻟﮕﺎﺅ ﻻﻓﺎﻧﯽ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺱ ﺳﺎﻧﺤﮯ ﻧﮯ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﮐﻮ ﺗﻮﮌ ﮐﺮ ﺭﮐﮫ ﺩﯾﺎ۔ ﯾﮧ ﺳﺎﻝ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﭘﺮ ﺑﮩﺖ ﮨﯽ ﮐﭩﮭﻦ ﺭﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﯿﺮﯾﺮ ﮐﺎ ﻋﺮﻭﺝ ﮐﮭﻮﯾﺎ، ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﮯ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﺳﺎﻝ ﺑﺴﺘﺮ ﭘﺮ ﮔﺰﺍﺭﮮ، ﺍﺱ ﻧﮯ ﺗﻤﺎﻡ ﺗﺮ ﻭﺳﺎﺋﻞ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺎﮞ ﮐﻮ ﮐﮭﻮ ﺩﯾﺎ۔ ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﺟﻮ ﺧﻮﺩ ﺍﭘﻨﯽ ﺗﻘﺪﯾﺮ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﭘﺮ ﯾﻘﯿﻦ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﺗﮭﺎ، ﺁﺝ ﻧﺼﯿﺐ ﮐﮯ ﺩﺭ ﮐﺎ ﺑﮭﮑﺎﺭﯼ ﺑﻦ ﮐﺮ ﺭﮦ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﯽ ﺷﺎﻡ ﺗﮭﯽ ﺟﺐ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﺸﯿﺮ ﻧﺎﻣﯽ ﺍﯾﮏ ﺭﻭﺣﺎﻧﯽ ﺷﺨﺼﯿﺖ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﻮﺋﯽ۔ ﮐﻢ ﮔﻮ ﺍﻭﺭ ﺷﺮﻣﯿﻼ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﭘﮭﻮﭦ ﭘﮭﻮﭦ ﮐﺮ ﺭﻭﻧﮯ ﻟﮕﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺳﺎﺭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﺤﻨﺖ ﮐﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﯿﺮﯾﺮ ﮐﮯ ﻋﺮﻭﺝ ﭘﺮ ﺩﻡ ﺗﻮﮌ ﮔﯿﺎ، ﺩﻭﻟﺖ ﻣﻨﺪ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺎﮞ ﮐﻮ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻧﮧ ﺩﻻ ﺳﮑﺎ، ﺁﺝ ﻧﺎﻡ، ﭘﯿﺴﮧ، ﺷﮩﺮﺕ ﺍﻭﺭ ﺷﮩﺰﺍﺩﻭﮞ ﺟﯿﺴﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﮭﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﮯ ﺗﭙﺘﮯ ﺻﺤﺮﺍ ﻣﯿﮟ ﺁﺑﻠﮧ ﭘﺎ ﮨﻮﮞ، ﺭﻭﺡ ﺯﺧﻤﯽ ﮨﻮ ﭼﮑﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﯿﻮﮞ ﮨﮯ ؟ ﺍﮔﺮ ﻣﯿﺮﺍ ﮨﻨﺮ ﮨﯽ ﻣﯿﺮﮮ ﮐﺎﻡ ﻧﮧ ﺁﯾﺎ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺷﮯ ﺟﻮ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﻮ ﺩﻭﺍﻡ ﺑﺨﺸﺘﯽ ﮨﮯ ؟ ﺍﮔﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﺍﺭﺍﺩﻭﮞ ﮐﯽ ﻣﻀﺒﻮﻃﯽ ﺗﻤﺎﻡ ﺗﺮ ﻭﺳﺎﺋﻞ ﮐﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﮭﯽ ﺑﮯ ﺍﺛﺮ ﺭﮨﯽ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﻭﮦ ﮐﻮﻧﺴﯽ ﮐﺸﺘﯽ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﻮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﻨﺰﻝ ﭘﺮ ﭘﮩﻨﭽﺎﺗﯽ ﮨﮯ ؟ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﺸﯿﺮ ﺻﺎﺣﺐ ﻣﺴﮑﺮﺍﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﮨﯽ ﺟﻤﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﺎﺕ ﺧﺘﻢ ﮐﺮ ﺩﯼ ﮐﮧ ۔۔۔۔ " ﺷﺎﯾﺪ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻢ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﻃﺮﻑ ﺑﻼ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ، ﻭﮦ ﺗﻢ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﺎ ﯾﻘﯿﻦ ﺩﻻﻧﺎ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺟﺐ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﮯ ﭼﺎﺭﻭﮞ ﻃﺮﻑ ﺍﻧﺪﮬﯿﺮﺍ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺻﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﺩﯾﺎ ﺟﻞ ﺭﮨﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺍﻣﯿﺪ ﮐﺎ ﺩﯾﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﺩﯾﺎ ﺧﺪﺍ ﺟﻼﺗﺎ ﮨﮯ، ﺗﻢ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮯ ﮐﯽ ﺍﺱ ﺭﻭﺷﻨﯽ ﮐﺎ ﺗﻌﺎﻗﺐ ﮐﺮﻭ ﺍﻭﺭ ﯾﻘﯿﻦ ﮐﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﮨﺎﺗﮫ ﺳﮯ ﻣﺖ ﭼﮭﻮﮌﻧﺎ۔ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﯾﻘﯿﻦ، ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﮨﯽ ﺗﻢ ﮐﻮ ﻣﻨﺰﻝ ﭘﺮ ﭘﮩﻨﭽﺎﺋﮯ ﮔﺎ " ۔ ﭘﮭﺮ 1987 ﮐﺎ ﻭﺭﻟﮉ ﮐﭗ ﮨﺎﺭ ﮐﺮ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﻣﺎﯾﻮﺱ ﮨﻮ ﭼﮑﺎ ﺗﮭﺎ، ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﺮﮐﭧ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯼ، ﺷﻮﮐﺖ ﺧﺎﻧﻢ ﮨﺴﭙﺘﺎﻝ ﮐﺎ ﺍﻋﻼﻥ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﯾﻘﯿﻦ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺑﻼ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ، ﭘﺎﻧﭻ ﺳﺎﻝ ﺑﻌﺪ 1992 ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺍﯾﮏ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﭨﯿﻢ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺍﯾﮏ ﺍﻣﯿﺪ ﺍﯾﮏ ﯾﻘﯿﻦ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﭼﻼ ﺍﻭﺭ ﻭﺭﻟﮉ ﮐﭗ ﺟﯿﺖ ﮐﺮ ﻟﮯ ﺁﯾﺎ۔ ﺳﺮﺯﻣﯿﻦ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﭘﺮ ﭘﮩﻨﭻ ﮐﺮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺟﻮ ﺳﺐ ﺳﮯ ﭘﮩﻼ ﺑﯿﺎﻥ ﺩﯾﺎ، ﻭﮦ ﺗﮭﺎ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ " ﻭﺭﻟﮉ ﮐﭗ ﮐﯽ ﻓﺘﺢ ﻣﯿﺮﮮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﮐﯽ ﻓﺘﺢ ﮨﮯ " ۔ ﺍﺱ ﯾﻘﯿﻦ ﮐﮯ ﺳﮩﺎﺭﮮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺳﺎﺭﯼ ﺭﮐﺎﻭﭨﯿﮟ ﻋﺒﻮﺭ ﮐﯿﮟ، ﭼﺎﮨﮯ ﻭﮦ ﮐﺮﮐﭧ ﮐﮯ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﮨﻮﮞ ﯾﺎ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﮐﯽ ﺩﻟﺪﻝ ، ﺍﺱ ﻧﮯ ﺟﮩﺎﮞ ﺟﮩﺎﮞ ﻗﺪﻡ ﺭﮐﮭﺎ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﮐﯽ۔ ﻣﯿﮟ ﺟﺐ ﺑﮭﯽ 1992 ﮐﮯ ﻭﺭﻟﮉ ﮐﭗ ﮐﺎ ﺗﺠﺰﯾﮧ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﻮﮞ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﺳﻤﺠﮭﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮧ ﯾﮧ ﻭﺭﻟﮉ ﮐﭗ ﺑﺲ ﺍﯾﮏ ﺑﮭﭩﮑﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻣﺴﺎﻓﺮ ﮐﻮ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﺩﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﻣﯿﺪ ﮐﺎ ﭼﺮﺍﻍ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﺧﻮﺩ ﺧﺪﺍ ﻧﮯ ﺟﻼﯾﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺟﻮ ﯾﻘﯿﻦ ﮐﯽ ﺭﺍﮦ ﭘﺮ ﭼﻞ ﭘﮍﮮ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻣﻨﺰﻟﻮﮞ ﻧﮯ ﭘﻨﺎﮦ ﺩﯼ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺍﯾﮏ ﺳﭽﮯ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﯾﻘﯿﻦ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﮐﺎ ﺳﻔﺮ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻭﻗﺖ ﮐﮯ ﻭﻟﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻣﺸﻌﻞِ ﺭﺍﮦ ﮨﻮ ﮔﺎ ۔۔

Comments

Popular posts from this blog

Azeem solved past papers for FSc chemistry part 2

Azeem past papers and books by Azeem group of acadmeis are the best books for learning and teaching as well Azeem chemistry of Fsc part 2 are very good guide which include past paers of punjab boards include Ajk and etc Azeem past papers are the best papers ever i see both in quality and quantity I really suggest the students to bye Azeem past solved papers for good result 










Best Urdu paper presentation for Matric and Fsc students

Urdu paper need more presentation to get good marks in it there for irdu paper presentation is very important for all matric and inter students specially for Fsc students sp here is the best urdu presentation for the matric and inter and Fsc students








قد کو کیسے بڑھایا جایا کیا خوارک لی جائے اور کیا ورزش کی جائے

اج کل کے نوجوان طبقہ میں ایک چیز کو بہت زیادہ اہمیت دی جارہی ہے اور وہ ہے قد کہ قد کو کیسے بڑھایا جایا اج ہم اس موضوع پر بات کریں گے اور دیکھیں گے کہ قد میں کونسی چیزیں زیادہ اہمیت کے حامل ہے اور قد کو کس طرح بڑھایا جا سکتا ہے
بڑے قد کی اہمیت
یہ بات تو طے ہے کہ لمبا قد  ایک اچھی نوید ہے لمبے قد والے کو زیادہ پذیرائی ملتی ہے اور وہ زیادہ نمایاں طور پر ابھرتا ہے اسکو سرکاری نوکری جیسے کہ پولیس فوج یا دوسرے اداروں میں نوکری کے حصول میں زیادہ مشکلات پیش نہیں اتی اور خصوصا لڑکیاں کو بھی بڑے قد کا شہزادہ ہی چاہئے ہوتا ہے😂😂😂 بہر لمبے قد کی افادیت بھی ہے اور نقصان بھی
لمبے قد کے نقصانات 
لمبے قد کے اگرچہ فائدے بہت زیادہ ہے مگر اسکے نقصانات بھی اتنے ہی زیادہ ہے عموما لمبے قد والوں کو خاصی تکلیف پیش اتی ہے کہ وہ اپنی لمبی لمبی ٹانگیں کیسے سمیٹ کر بیٹھے اور کیسے سکون کے ساتھ وقت گزارے اسکےعلاوہ اگر قد لمبا ہو مگر بندہ خود پتلا ہو تو اسکا بہت زیادہ مزاق اڑایا جاتا ہے
مناسب قد کتنا ہونا چاہئے
ماہرین کے مطابق مناسب قد زیادہ سے زیادہ ساڑھے چھ انچ ہو اور کم سے کم ساڑھے پانچ انچ ہونا چاپئے اس سے زیاد…