Skip to main content

ہمارا تعلیمی نظام اور اس میں کرپشن کی کہانیاں

ﺁﭖ ﮐﻮ ﯾﺎﺩ ﮨﻮ ﮔﺎ ﺁﺝ ﺳﮯ ﺩﻭ ﺳﺎﻝ ﭘﮩﻠﮯ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮐﮯ ﺷﻌﺒﮯ ﻣﯿﮟ " ﺍﻧﻘﻼﺏ " ﻻﻧﮯ ﮐﯽ ﻏﺮﺽ ﺳﮯ " ﻭﺯﯾﺮﺍﻋﻈﻢ ﺍﯾﺠﻮﮐﯿﺸﻦ ﺭﯾﻔﺎﺭﻣﺰ ﭘﺮﻭﮔﺮﺍﻡ " ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﺟﺐ ﯾﮧ ﻣﻨﺼﻮﺑﮧ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﺍ ﺗﻮ ﻋﺎﺩﺕ ﮐﮯ ﻋﯿﻦ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﺑﺠﭧ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﻣﺨﺼﻮﺹ ﺣﺼﮧ ﺻﺮﻑ ﻟﻔﺎﻓﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺪ ﻣﯿﮟ ﻣﻦ ﭘﺴﻨﺪ ﺍﯾﻨﮑﺮﻭﮞ، ﺻﺤﺎﻓﯿﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺍﺧﺒﺎﺭﻭﮞ ﮐﻮ ﺩﮮ ﮐﺮ ﺍﺱ ﻣﻨﺼﻮﺑﮯ ﮐﮯ ﺣﻖ ﻣﯿﮟ ﺯﻣﯿﻦ ﺁﺳﻤﺎﻥ ﮐﮯ ﻗﻼﺑﮯ ﻣﻼﺋﮯ ﮔﺌﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﻮ " ﺗﻌﻠﯿﻤﯽ ﺍﻧﻘﻼﺏ " ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺩﯾﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﻭﺯﯾﺮﺍﻋﻈﻢ ﺍﯾﺠﻮﮐﯿﺸﻦ ﺭﯾﻔﺎﺭﻣﺰ ﭘﺮﻭﮔﺮﺍﻡ ﻣﯿﮟ ﻓﯿﺰ ﻭﻥ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ 22 ﻣﺎﮈﻝ ﺳﮑﻮﻟﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﺰﺋﯿﻦ ﻭ ﺁﺭﺍﺋﺶ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭘﯿﺴﮯ ﻣﺨﺘﺺ ﮐﯿﮯ ﮔﺌﮯ، ﺑﭽﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ 60 ﺳﮑﻮﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻭﺭﮐﺸﺎﭖ ﮐﻼﺳﺰ ﮐﺎ ﺍﮨﺘﻤﺎﻡ ﺑﮭﯽ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﻧﺎ ﺗﮭﺎ، ﺳﮑﻮﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺟﺪﯾﺪ ﺳﮩﻮﻟﯿﺎﺕ ﺳﮯ ﺁﺭﺍﺳﺘﮧ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺍﭖ ﮔﺮﯾﮉ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﺑﮭﯽ ﻣﻨﺼﻮﺑﮧ ﺑﮭﯽ ﺷﺎﻣﻞ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﺳﺎﺭﮮ ﮐﺎﻣﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ 4 ﺍﺭﺏ ﺭﻭﭘﮯ ﻣﺨﺘﺺ ﮐﯽ ﮔﺌﮯ ﺗﮭﮯ۔
ﭘﮩﻠﮯ ﻣﺮﺣﻠﮯ ﭘﺮ ﺩﻭ ﺳﻮ ﺳﮑﻮﻝ ﺑﺴﯿﮟ ﺧﺮﯾﺪﯼ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﺟﺐ ﯾﮧ ﺑﺴﯿﮟ ﺧﺮﯾﺪﯼ ﮔﺌﯽ ﺗﻮ ﻟﻔﺎﻓﮧ ﺻﺤﺎﻓﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﻼ ﮐﺮ ﺍﯾﮏ ﭘﺮﺗﮑﻠﻒ ﺿﯿﺎﻓﺖ ﮐﺎ ﺍﮨﺘﻤﺎﻡ ﮐﺮﻭﺍﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﺑﺴﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﻌﺮﯾﻒ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﭘﻮﺭﯼ ﮐﯿﻤﭙﺌﻦ ﭼﻼﺋﯽ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﻣﺮﯾﻢ ﻧﻮﺍﺯ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﭨﻮﺋﯿﭩﺮ ﺍﮐﺎﺅﻧﭧ ﭘﺮ ﻟﮑﮭﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﺏ ﻗﻮﻡ ﮐﯽ ﮨﺮ ﺑﯿﭩﯽ ﺳﮑﻮﻝ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ۔ ﺷﮑﺮﯾﮧ ﻧﻮﺍﺯﺷﺮﯾﻒ



ﺍﻥ ﺳﺎﺭﮮ ﻣﻨﺼﻮﺑﻮﮞ ﭘﺮ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ﭼﺎﺭ ﺳﮯ ﺳﺎﺕ ﺍﺭﺏ ﺭﻭﭘﮯ ﮐﺎ ﺧﺮﭼﮧ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ۔ ﻣﻦ ﭘﺴﻨﺪ ﮐﻤﭙﻨﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﭨﮭﯿﮑﮯ ﺩﯾﮯ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺳﺎﺭﮮ ﮐﺎ ﺳﺎﺭﮮ ﭘﯿﺴﮧ ﺧﺮﺩﺑﺮﺩ ﮐﯽ ﻧﻈﺮ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ۔ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﮟ ﺟﺐ ﯾﮧ ﮐﯿﺲ ﻧﯿﺐ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﭘﮩﻨﭽﺎ ﺗﻮ ﮐﺮﭘﺸﻦ ﺍﻭﺭ ﻟﻮﭦ ﻣﺎﺭ ﮐﯽ ﺍﯾﺴﯽ ﮨﻮﺷﺮﺑﺎ ﺩﺍﺳﺘﺎﻥ ﮐﮭﻠﯽ ﮐﮧ ﮨﺮ ﻏﯿﺮﺕ ﻣﻨﺪ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﺷﺮﻡ ﺳﮯ ﭘﺎﻧﯽ ﭘﺎﻧﯽ ﺗﮭﺎ۔
ﺣﺴﺎﺱ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﻧﮯ ﻧﯿﺐ ﮐﻮ ﺟﻮ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﺩﯼ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﺯﯾﮉ ﮐﮯ ﺑﯽ ﺍﻭﺭ ﺳﭽﻞ ﻧﺎﻣﯽ ﮐﻤﭙﻨﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﭨﮭﯿﮑﮯ ﺩﯾﮯ ﮔﺌﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﻣﺮﺣﻠﮯ ﻣﯿﮟ 200 ﺳﮑﻮﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭨﯿﻨﮉﺭ ﺑﮭﯽ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﭨﯿﻨﮉﺭ ﻓﺮﺍﮨﻢ ﮐﺮﻧﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮨﯽ ﮈﯾﮍﮪ ﺍﺭﺏ ﺭﻭﭘﮯ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺩﮮ ﺩﯾﮯ ﮔﺌﮯ، ﺟﻦ ﮐﺎ ﺁﺝ ﺗﮏ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﮐﭽﮫ ﭘﺘﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﻞ ﺳﮑﺎ۔ ﯾﮧ ﮐﯿﺲ ﺍﺑﮭﯽ ﺗﮏ ﻧﯿﺐ ﻣﯿﮟ ﭘﮍﺍ ﺳﮍ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔
ﺁﺝ ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭ ﺧﺒﺮ ﺑﺮﯾﮏ ﮨﻮﺋﯽ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺟﻮ ﺑﺴﯿﮟ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺗﻌﻠﯿﻤﯽ ﺍﻧﻘﻼﺏ ﮐﺎ ﺁﻏﺎﺯ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺳﺘﺮ ﺑﺴﯿﮟ ﺧﺮﺍﺏ ﻧﮑﻞ ﺁﺋﯽ ﮨﯿﮟ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺟﺎﻥ ﺑﻮﺟﮫ ﮐﺮ ﮐﺮﭘﺸﻦ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﯾﺴﯽ ﮐﺒﺎﮌﮦ ﺑﺴﯿﮟ ﺧﺮﯾﺪﯼ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﺗﺎ ﮐﮧ ﮐﺎﻏﺬﻭﮞ ﮐﺎ ﭘﯿﭧ ﺑﮭﺮﺍ ﺟﺎ ﺳﮑﮯ۔ ﮐﯿﮉ ﺣﮑﺎﻡ ﻧﮯ ﺗﯿﻦ ﺭﮐﻨﯽ ﮐﻤﯿﭩﯽ ﺑﻨﺎﺋﯽ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺗﺤﻘﯿﺎﺕ ﮐﺮﮮ ﮔﯽ۔ ﺍﻥ ﺑﺴﻮﮞ ﮐﯽ ﺑﺮﯾﮑﺲ، ﭼﮭﺘﯿﮟ ، ﮔﯿﺞ، ﻣﯿﭩﺮ، ﺳﮑﺮﯾﻦ، ﻭﺍﺋﭙﺮ ﻣﺸﯿﻦ ﺧﺮﺍﺏ ﭘﺎﺋﮯ ﮔﺌﮯ ، ﺍﻧﺠﻦ، ﮔﯿﺌﺮ ﺁﺋﻞ ﻟﯿﮑﯿﺞ ، ﮔﯿﺌﺮ ﺑﺎﮐﺲ ﺧﺮﺍﺑﯽ ﺍﻭﺭ ﺑﺴﻮﮞ ﮐﯽ ﮐﻤﺎﻧﯿﺎﮞ ﺑﮭﯽ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﭘﺎﺋﯽ ﮔﺌﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﺑﺴﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻟﮕﺎﺋﯽ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﮐﻤﺎﻧﯿﺎﮞ ﺍﻥ ﺑﺴﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﯿﺎﺭﯼ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﯿﮟ، ﺟﺲ ﻣﯿﭩﺮﯾﻞ ﺳﮯ ﺑﺲ ﮐﯽ ﺑﺎﮈﯼ ﺑﻨﺎﺋﯽ ﮔﺌﯽ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﻧﺎﻗﺺ ﻧﮑﻠﯽ، ﭼﮭﺘﻮﮞ ﺳﮯ ﭘﺎﻧﯽ ﭨﭙﮑﺘﺎ ﮨﮯ ، ﮐﻤﯿﭩﯽ ﮐﯽ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻭﺯﺍﺭﺕ ﮐﯿﮉ ﺷﻌﺒﮧ ﻓﻨﺎﻧﺲ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺳﻮ ﺗﯿﺲ ﻣﺰﯾﺪ ﺑﺴﻮﮞ ﮐﯽ ﺧﺮﯾﺪﺍﺭﯼ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﯾﻒ ﮈﯼ ﺍﯼ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﺳﮯ ﺗﯿﺎﺭ ﮐﺮﺩﮦ ﺳﻤﺮﯼ ﭘﺮ ﺗﺤﻔﻈﺎﺕ ﮐﺎ ﺍﻇﮩﺎﺭ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ۔
ﺍﺏ ﺧﻮﺩ ﺍﻧﺪﺍﺯﮦ ﻟﮕﺎ ﻟﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﻥ ﺑﺴﻮﮞ ﮐﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺟﯿﺴﺎ ﮨﮯ، ﮐﭽﮫ ﺑﮭﯽ ﮐﺎﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ، ﺳﺎﺭﮮ ﻓﻨﮑﺸﻨﺰ ﻣﻌﻄﻞ ﮨﻮ ﭼﮑﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻧﺎﺍﮨﻞ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ، ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﻧﮓ ﺳﯿﭧ ﭘﺮ ﺑﯿﭩﮭﺎ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ۔
ﻣﺮﯾﻢ ﻧﻮﺍﺯ ﺳﮯ ﮐﮩﻨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺑﺴﻮﮞ ﮐﮯ ﺍﺗﻨﻈﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﮐﮭﺘﯽ ﻗﻮﻡ ﮐﯽ ﺑﯿﭩﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﺏ ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭ ﭨﻮﯾﭧ ﺑﮭﯽ ﮐﺮ ﺩﯾﺠﯿﮯ ﺍﻭﺭ ﻗﻮﻡ ﮐﯽ ﺑﯿﭩﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﺘﺎ ﺩﯾﺠﯿﮯ ﮐﮧ ﺑﭽﻮ ﺟﻮ ﺑﺴﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺳﮑﻮﻝ ﭘﮩﻨﭽﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﺧﺮﯾﺪﯼ ﺗﮭﯽ، ﺍﻥ ﮐﺎ ﭘﯿﺴﮧ ﭨﮭﯿﮑﮯ ﺩﺍﺭ ﮐﻤﭙﻨﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﮐﻤﯿﺸﻦ ﮐﯽ ﻣﺪ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﻼ ﺩﯾﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﻗﯽ ﭘﯿﺴﮧ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﻨﺪﻥ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﮐﺎﺅﻧﭧ ﻣﯿﮟ ﭼﻼ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﯾﮩﯽ ﻭﮦ ﺗﺮﻗﯽ ﮐﺎ ﺳﻔﺮ ﮨﮯ ﺟﻮ ﻃﮯ ﮐﺮ ﮐﮯ ﮨﻢ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﭘﮩﻨﭽﮯ ﮨﯿﮟ۔
ﺍﻭﺭ ﮨﺎﮞ ﺁﺧﺮ ﻣﯿﮟ ﯾﺎﺩ ﺁﯾﺎ ﮐﮧ ﻣﺮﯾﻢ ﻧﻮﺍﺯ ﻧﮯ ﺍﺳﯽ ﺍﯾﺠﻮﮐﯿﺸﻨﻞ ﭘﺮﺍﺟﯿﮑﭧ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﻣﺮﯾﮑﯽ ﺻﺪﺭ ﺍﻭﺑﺎﻣﮧ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﻣﺸﻌﺎﻝ ﺍﻭﺑﺎﻣﮧ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺳﺎﺕ ﺍﺭﺏ ﺭﻭﭘﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ ﮐﮭﺎ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﻧﯿﺐ ﻣﯿﮟ ﺗﺤﻘﯿﻘﺎﺕ ﭼﻞ ﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ۔۔۔۔ 

Comments

Popular posts from this blog

Azeem solved past papers for FSc chemistry part 2

Azeem past papers and books by Azeem group of acadmeis are the best books for learning and teaching as well Azeem chemistry of Fsc part 2 are very good guide which include past paers of punjab boards include Ajk and etc Azeem past papers are the best papers ever i see both in quality and quantity I really suggest the students to bye Azeem past solved papers for good result 










Best Urdu paper presentation for Matric and Fsc students

Urdu paper need more presentation to get good marks in it there for irdu paper presentation is very important for all matric and inter students specially for Fsc students sp here is the best urdu presentation for the matric and inter and Fsc students








قد کو کیسے بڑھایا جایا کیا خوارک لی جائے اور کیا ورزش کی جائے

اج کل کے نوجوان طبقہ میں ایک چیز کو بہت زیادہ اہمیت دی جارہی ہے اور وہ ہے قد کہ قد کو کیسے بڑھایا جایا اج ہم اس موضوع پر بات کریں گے اور دیکھیں گے کہ قد میں کونسی چیزیں زیادہ اہمیت کے حامل ہے اور قد کو کس طرح بڑھایا جا سکتا ہے
بڑے قد کی اہمیت
یہ بات تو طے ہے کہ لمبا قد  ایک اچھی نوید ہے لمبے قد والے کو زیادہ پذیرائی ملتی ہے اور وہ زیادہ نمایاں طور پر ابھرتا ہے اسکو سرکاری نوکری جیسے کہ پولیس فوج یا دوسرے اداروں میں نوکری کے حصول میں زیادہ مشکلات پیش نہیں اتی اور خصوصا لڑکیاں کو بھی بڑے قد کا شہزادہ ہی چاہئے ہوتا ہے😂😂😂 بہر لمبے قد کی افادیت بھی ہے اور نقصان بھی
لمبے قد کے نقصانات 
لمبے قد کے اگرچہ فائدے بہت زیادہ ہے مگر اسکے نقصانات بھی اتنے ہی زیادہ ہے عموما لمبے قد والوں کو خاصی تکلیف پیش اتی ہے کہ وہ اپنی لمبی لمبی ٹانگیں کیسے سمیٹ کر بیٹھے اور کیسے سکون کے ساتھ وقت گزارے اسکےعلاوہ اگر قد لمبا ہو مگر بندہ خود پتلا ہو تو اسکا بہت زیادہ مزاق اڑایا جاتا ہے
مناسب قد کتنا ہونا چاہئے
ماہرین کے مطابق مناسب قد زیادہ سے زیادہ ساڑھے چھ انچ ہو اور کم سے کم ساڑھے پانچ انچ ہونا چاپئے اس سے زیاد…