Skip to main content

ٹیکس ایمنسٹی اور پاکستان



ﭘﻮﺭﯼ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﭨﯿﮑﺲ ﺍﯾﻤﻨﯿﺴﭩﯽ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﻌﯿﺸﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﻠﮑﯽ
ﺑﮩﺘﺮﯼ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﭨﯿﮑﺲ ﺍﯾﻤﻨﯿﺴﭩﯽ ﮐﺎ ﻋﻤﻮﻣﯽ ﮐﻠﭽﺮ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﭨﮯ ﻣﻮﭨﮯ ﻻﻟﭻ ﺩﮮ ﮐﺮ ﭨﯿﮑﺲ ﺩﯾﻨﮯ ﭘﺮ ﺭﺍﺿﯽ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﮐﯽ ﮔﺎﺭﻧﭩﯽ ﺩﯼ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﻭﺍﺟﺐ ﺍﻻﺩﺍ ﭨﯿﮑﺲ ﺑﻐﯿﺮ ﮐﺴﯽ ﺣﯿﻞ ﻭ ﺣﺠﺖ ﮐﮯ ﺍﺩﺍ ﮐﺮ ﺩﯾﮟ ﮔﮯ ﺗﻮ ﻣﺰﯾﺪ ﮐﻮﺋﯽ ﺟﺎﻧﭻ ﭘﮍﺗﺎﻝ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ۔
ﺍﺱ ﺳﮯ ﺳﻤﺎﻝ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮉﯾﻢ ﺳﺎﺋﺰ ﮐﺎﺭﻭﺑﺎﺭﯼ ﺣﻀﺮﺍﺕ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﺍﭨﮭﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻭﺍﺟﺐ ﺍﻻﺩﺍ ﭨﯿﮑﺲ ﺑﮭﺮ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔
ﺍﺱ ﺳﮯ ﺑﮍﮮ ﻟﯿﻮﻝ ﭘﺮ ﺣﮑﻮﻣﺘﯿﮟ ﮐﺎﺭﻭﺑﺎﺭﯼ ﺣﻀﺮﺍﺕ ﮐﻮ ﺳﺮﻣﺎﯾﮧ ﮐﺎﺭﯼ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﺗﺮﻏﯿﺐ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﺧﺎﺹ ﺭﻋﺎﯾﺖ ﮐﺎ ﻻﻟﭻ ﺩﮮ ﮐﺮ ﭨﯿﮑﺲ ﻟﮯ ﻟﯿﺘﯽ ﮨﯿﮟ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺣﮑﻮﻣﺘﯿﮟ ﺟﺎﻧﺘﯽ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﺯﺑﺮﺩﺳﺘﯽ ﭨﯿﮑﺲ ﻟﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﻣﻀﺒﻮﻁ ﮐﺎﺭﻭﺑﺎﺭﯼ ﻟﻮﮒ ﻋﺪﺍﻟﺘﻮﮞ ﮐﺎ ﺭﺥ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﻮﮞ ﻣﻌﺎﻣﻼﺕ ﺗﺎﺧﯿﺮ ﺍﻭﺭ ﺗﻌﻄﻞ ﮐﺎ ﺷﮑﺎﺭ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ۔ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﺗﺮﻗﯽ ﯾﺎﻓﺘﮧ ﻣﻤﺎﻟﮏ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﯿﺴﺰ ﮐﻮ ﻋﺪﺍﻟﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺍﯾﮏ ﮈﯾﻞ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﺣﻞ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﭨﯿﮑﺲ ﻟﯿﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻣﯿﺎﺏ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ۔
ﻟﯿﮑﻦ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﮩﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ ﮐﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﺎﺭﻭﺑﺎﺭﯼ ﺷﺨﺺ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﭘﺮ ﺍﺛﺮﺍﻧﺪﺍﺯ ﮨﻮ ﮐﺮ ﮐﺮﭘﺸﻦ، ﭨﮭﯿﮑﻮﮞ، ﮐﻤﯿﺸﻨﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﮐﮏ ﺑﯿﮑﺲ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﭘﯿﺴﮯ ﮐﻤﺎﺋﮯ، ﺍﭘﻨﮯ ﻣﻠﮏ ﮐﺎ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﺗﻮﮌﮮ، ﻋﻮﺍﻡ ﮐﻮ ﻏﺮﺑﺖ ﮐﯽ ﺩﻟﺪﻝ ﻣﯿﮟ ﺩﮬﻨﺴﺎﺋﮯ، ﭘﮭﺮ ﺍﺳﯽ ﭘﯿﺴﮯ ﮐﻮ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﮨﯽ ﻣﻠﮏ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﻻﺑﻨﮓ ﮐﺮﮮ، ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﮐﻮ ﺭﺷﻮﺕ ﺩﮮ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﻧﺎﺟﺎﺋﺰ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻭﺍﺋﮯ، ﭘﮭﺮ ﺍﺳﯽ ﻟﻮﭨﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﭘﯿﺴﮯ ﺳﮯ ﻣﺴﻠﺢ ﮔﺮﻭﭖ ﭘﺎﻟﮯ ﺍﻭﺭ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﻗﺘﻞ ﮐﺮﻭﺍﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺧﻮﺩ ﮨﯽ ﺍﺳﻤﺒﻠﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﭩﮫ ﮐﺮ ﺍﯾﮏ ﭨﯿﮑﺲ ﺍﯾﻤﻨﺴﭩﯽ ﺳﮑﯿﻢ ﮐﺎ ﺩﻭ ﭘﺮﺳﻨﭧ ﭘﺮ ﺍﻋﻼﻥ ﮐﺮﮮ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺧﻮﺩ ﮨﯽ ﺍﺱ ﺳﮯ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﺍﭨﮭﺎ ﻟﮯ۔
ﯾﻘﯿﻦ ﮐﯿﺠﯿﮯ ﺩﻧﯿﺎ ﺑﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺑﮯ ﺷﻤﺎﺭ ﭨﯿﮑﺲ ﺍﯾﻤﻨﺴﭩﯿﺰ ﺳﮑﯿﻤﯿﮟ ﮨﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﯾﺴﺎ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﺳﻮﺍﺋﮯ ﺍﺳﻼﻣﯽ ﺟﻤﮩﻮﺭﯾﮧ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ
ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﭨﯿﮑﺲ ﺍﯾﻤﻨﯿﺴﭩﯽ ﺳﯿﮑﻢ ﻻﻧﭻ ﺻﺮﻑ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺩﻧﯿﺎ ﺑﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻻ ﺩﮬﻦ ﺭﮐﮭﻨﺎ ﺍﺏ ﺑﮩﺖ ﺑﮍﺍ ﻣﺴﻠﮧ ﮨﻮ ﭼﮑﺎ ﮨﮯ، ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﺍﺷﺮﺍﻓﯿﮧ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﺎﻟﮯ ﺩﮬﻦ ﮐﻮ ﺳﻔﯿﺪ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﺱ ﺳﮑﯿﻢ ﮐﺎ ﺍﺟﺮﺍﺀ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ۔
ﭘﭽﮭﻠﮯ ﭼﻨﺪ ﺳﺎﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺩﻧﯿﺎ ﺑﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﭨﯿﮑﺲ ﺍﯾﻤﻨﺴﭩﯽ ﺳﮑﯿﻤﯿﮟ ﻣﺘﻌﺎﺭﻑ ﮐﺮﻭﺍﺋﯽ ﮔﺌﯿﮟ، ﺟﻦ ﻣﯿﮟ ﺁﺳﭩﺮﯾﻠﯿﺎ، ﺑﻠﺠﯿﻢ، ﮐﯿﻨﯿﮉﺍ، ﺟﺮﻣﻨﯽ، ﺭﻭﺱ، ﺟﻨﻮﺑﯽ ﺍﻓﺮﯾﻘﮧ، ﺑﮭﺎﺭﺕ ﺍﻭﺭ ﺍﻣﺮﯾﮑﮧ ﺟﯿﺴﮯ ﻣﻤﺎﻟﮏ ﺷﺎﻣﻞ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ ﻣﻠﮑﻮﮞ ﻧﮯ ﭼﺎﻟﯿﺲ ﺳﮯ ﭘﻨﺘﺎﻟﯿﺲ ﻓﯿﺼﺪ ﺍﺩﺍﺋﯿﮕﯽ ﭘﺮ ﺳﮑﯿﻢ ﻣﺘﻌﺎﺭﻑ ﮐﺮﻭﺍﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺭﺑﻮﮞ ﮈﺍﻟﺮﺯ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﻠﮑﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻻﺋﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﯾﻘﯿﻦ ﮐﯿﺠﯿﮯ ﯾﮧ ﺗﻤﺎﻡ ﮐﺎ ﺗﻤﺎﻡ ﭘﯿﺴﮧ ﻣﺤﺾ ﭨﯿﮑﺲ ﺑﭽﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭼﮭﭙﺎ ﮐﺮ ﺭﮐﮭﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﯾﻌﻨﯽ ﺍﺱ ﭘﯿﺴﮯ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﭨﯿﮑﺲ ﮐﻮ ﺑﭽﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺳﻮﭺ ﺿﺮﻭﺭ ﮐﺎﺭﻓﺮﻣﺎ ﺗﮭﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﺟﺮﻡ ﺷﺎﻣﻞ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ۔
ﺟﺒﮑﮧ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﻮ ﻓﯿﺼﺪ ﻟﻮﮒ ﻭﮦ ﮨﯿﮟ ﺟﻨﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﻠﮑﯽ ﻣﻌﯿﺸﺖ ﮐﯽ ﺗﺒﺎﮨﯽ ﮐﯽ ﻗﯿﻤﺖ ﭘﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﻨﮏ ﺍﮐﺎﺅﻧﭩﺲ ﺑﮭﺮﮮ۔ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﭩﺎﮎ ﺍﯾﮑﺴﭽﯿﻨﺞ ﻣﯿﻨﻮ ﭘﻠﯿﺸﻦ، ﺯﻣﯿﻨﻮﮞ ﭘﺮ ﻗﺒﻀﮯ، ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﻟﻮﭦ ﻣﺎﺭ، ﺑﯿﺮﻭﻧﯽ ﺍﯾﺠﻨﮉﻭﮞ ﭘﺮ ﻋﻤﻞ ﭘﯿﺮﺍ ﮨﻮ ﮐﺮ، ﺗﺮﻗﯿﺎﺗﯽ ﮐﺎﻣﻮﮞ ﮐﯽ ﺁﮌ ﻣﯿﮟ ﭨﮭﯿﮑﮯ، ﮐﺮﭘﺸﻦ، ﮐﻤﯿﺸﻦ ﺍﻭﺭ ﮐﮏ ﺑﯿﮑﺲ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﺴﮯ ﺑﮯ ﺷﻤﺎﺭ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﻃﺮﯾﻘﻮﮞ ﺳﮯ ﭘﯿﺴﮧ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺟﺮﻡ ﮐﺎﺭﻓﺮﻣﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺱ ﭘﯿﺴﮯ ﮐﻮ ﮐﻤﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﻣﻌﯿﺸﺖ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﺘﺤﮑﺎﻡ ﮐﻮ ﺩﺍﺅ ﭘﺮ ﻟﮕﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ۔
ﯾﮩﺎﮞ ﭘﺮ ﺑﺎﺕ ﻣﺤﺾ ﭨﯿﮑﺲ ﭼﮭﭙﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺑﻠﮑﮧ ﯾﮧ ﻭﮦ ﻟﻮﮒ ﮨﯿﮟ ﺟﻨﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﭘﯿﭧ ﮐﯽ ﺩﻭﺯﺥ ﺑﮭﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﻮ ﻟﮩﻮ ﻟﮩﺎﻥ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ۔ ﯾﮧ ﺗﻤﺎﻡ ﻟﻮﮒ ﻣﺠﺮﻡ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﻥ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﭨﯿﮑﺲ ﺍﯾﻤﻨﯿﺴﭩﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺍﻥ ﮐﺎ ﻋﺪﺍﻟﺘﯽ ﭨﺮﺍﺋﻞ ﮨﻮﻧﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔
ﺍﺏ ﺁﭖ ﺧﻮﺩ ﺳﻮﭺ ﻟﯿﺠﯿﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺳﮑﯿﻢ ﮐﻦ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻣﺘﻌﺎﺭﻑ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ۔ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺳﮑﯿﻢ ﮐﮯ ﺍﺟﺮﺍﺀ ﺳﮯ ﺟﺮﻡ ﺍﻭﺭ ﮐﺮﭘﺸﻦ ﮐﻮ ﺑﺎﻗﺎﻋﺪﮦ ﻗﺎﻧﻮﻧﯽ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﺳﮑﯿﻢ ﺑﺎﺋﯿﺲ ﮐﺮﻭﮌ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﺍﺟﺘﻤﺎﻋﯽ ﺩﺍﻧﺶ ﺍﻭﺭ ﺷﻌﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﯾﮏ ﺯﻭﺭﺩﺍﺭ ﺗﻤﺎﭼﮧ ﮨﮯ۔۔۔۔

Comments

Popular posts from this blog

Azeem solved past papers for FSc chemistry part 2

Azeem past papers and books by Azeem group of acadmeis are the best books for learning and teaching as well Azeem chemistry of Fsc part 2 are very good guide which include past paers of punjab boards include Ajk and etc Azeem past papers are the best papers ever i see both in quality and quantity I really suggest the students to bye Azeem past solved papers for good result 










Best Urdu paper presentation for Matric and Fsc students

Urdu paper need more presentation to get good marks in it there for irdu paper presentation is very important for all matric and inter students specially for Fsc students sp here is the best urdu presentation for the matric and inter and Fsc students








قد کو کیسے بڑھایا جایا کیا خوارک لی جائے اور کیا ورزش کی جائے

اج کل کے نوجوان طبقہ میں ایک چیز کو بہت زیادہ اہمیت دی جارہی ہے اور وہ ہے قد کہ قد کو کیسے بڑھایا جایا اج ہم اس موضوع پر بات کریں گے اور دیکھیں گے کہ قد میں کونسی چیزیں زیادہ اہمیت کے حامل ہے اور قد کو کس طرح بڑھایا جا سکتا ہے
بڑے قد کی اہمیت
یہ بات تو طے ہے کہ لمبا قد  ایک اچھی نوید ہے لمبے قد والے کو زیادہ پذیرائی ملتی ہے اور وہ زیادہ نمایاں طور پر ابھرتا ہے اسکو سرکاری نوکری جیسے کہ پولیس فوج یا دوسرے اداروں میں نوکری کے حصول میں زیادہ مشکلات پیش نہیں اتی اور خصوصا لڑکیاں کو بھی بڑے قد کا شہزادہ ہی چاہئے ہوتا ہے😂😂😂 بہر لمبے قد کی افادیت بھی ہے اور نقصان بھی
لمبے قد کے نقصانات 
لمبے قد کے اگرچہ فائدے بہت زیادہ ہے مگر اسکے نقصانات بھی اتنے ہی زیادہ ہے عموما لمبے قد والوں کو خاصی تکلیف پیش اتی ہے کہ وہ اپنی لمبی لمبی ٹانگیں کیسے سمیٹ کر بیٹھے اور کیسے سکون کے ساتھ وقت گزارے اسکےعلاوہ اگر قد لمبا ہو مگر بندہ خود پتلا ہو تو اسکا بہت زیادہ مزاق اڑایا جاتا ہے
مناسب قد کتنا ہونا چاہئے
ماہرین کے مطابق مناسب قد زیادہ سے زیادہ ساڑھے چھ انچ ہو اور کم سے کم ساڑھے پانچ انچ ہونا چاپئے اس سے زیاد…