Skip to main content

عمران خان ایک عظیم لیڈر




ﻟﮑﺸﻤﯽ ﭼﻮﮎ ﻻﮨﻮﺭ ﮐﮯ ﺗﯿﻦ ﺍﻃﺮﺍﻑ ﭨﮑﺎﭨﮏ ﮐﮯ ﻣﺮﺍﮐﺰ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﺑﮍﮮ ﺗﻮﮮ ﭘﺮ ﺑﮑﺮﮮ ﮐﯽ ﭼﺎﻧﭗ ﺍﻭﺭ ﻗﯿﻤﮧ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﺑﻨﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺗﻮﮮ ﭘﺮ ﭼﺎﻧﭗ ﯾﺎ ﻗﯿﻤﮧ، ﮔﺮﺩﮮ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﺗﯿﺎﺭ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻋﻤﻞ ﻣﯿﮟ ﺳﭩﯿﻞ ﮐﮯ ﻭﺯﻧﯽ ﺳﭙﯿﭽﻮﻻﺯ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﺗﻮﮮ ﭘﺮ ﻣﺎﻣﻮﺭ ﺷﯿﻒ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﺍﺱ ﻣﮩﺎﺭﺕ ﺳﮯ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﻣﺨﺼﻮﺹ ﺭﺩﮬﻢ ﮐﺎ ﻣﯿﻮﺯﮎ ﺳﺎ ﺑﺠﻨﮯ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮩﯽ ﻭﺟﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺳﮯ ﭨﮑﺎﭨﮏ ﮐﮩﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﭨﻤﺎﭨﺮ ﺍﻭﺭ ﭘﯿﺎﺯ ﮐﻮ ﺗﻮﮮ ﭘﺮ ﮔﻼﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺟﺐ ﺳﭩﯿﻞ ﮐﮯ ﺍﻥ ﮨﯿﻮﯼ ﺳﭙﯿﭽﻮﻻﺯ ﺳﮯ ﺯﻭﺭ ﺯﻭﺭ ﺳﮯ ﭨﮑﮍﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺴﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﯾﮧ ﺁﻭﺍﺯ ﭘﻮﺭﮮ ﻟﮑﺸﻤﯽ ﭼﻮﮎ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺳﯿﻘﯽ ﮐﺎ ﺳﺎ ﺳﻤﺎﮞ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ ﺟﺴﮯ ﺳﻦ ﮐﺮ ﻧﮧ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﮭﯽ ﺭﺍﮨﮕﯿﺮ ﻭﮨﺎﮞ ﺭُﮎ ﮐﺮ ﺗﻮﮮ ﭘﺮ ﺑﻨﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﮈﺵ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﭘﺮ ﻣﺠﺒﻮﺭ ﮨﻮﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔
ﻟﮑﺸﻤﯽ ﭼﻮﮎ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﻃﺮﻑ ﺑﭧ ﭨﮑﺎﭨﮏ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﺨﺎﻟﻒ ﻭﺗﺮ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﮐﺎﮐﺎ ﭨﮑﺎﭨﮏ ﮨﮯ۔ ﮐﺎﮐﮯ ﮐﮯ ﺩﺍﺋﯿﮟ ﺟﺎﻧﺐ ﭼﻮﮎ ﮐﮯ ﺗﯿﺴﺮﮮ ﮐﻮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻧﺎﻣﻮﮞ ﺳﮯ ﺩﺱ ﺳﮯ ﺯﺍﺋﺪ ﺍﮈﮮ ﭨﮑﺎﭨﮏ ﮐﮯ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﯿﮟ۔
ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ ﺍﮈﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﮔﻮﺷﺖ ﮐﯽ ﺳﭙﻼﺋﯽ ﺍﯾﮏ ﮨﯽ ﺟﮕﮧ ﺳﮯ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺑﮑﺮﯾﮟ ﮐﯽ ﭼﺎﻧﭙﯿﮟ، ﮔﺮﺩﮮ، ﺩﻝ، ﻣﻐﺰ، ﮐﭙﻮﺭﮮ ﺍﻭﺭ ﮔﺎﺋﮯ ﮐﺎ ﻗﯿﻤﮧ ﺷﺎﻣﻞ ﮨﮯ۔ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺍﺟﺰﺍ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺎﺯ، ﭨﻤﺎﭨﺮ، ﻟﮩﺴﻦ ﺍﺩﺭﮎ ﮐﺎ ﭘﯿﺴﭧ، ﺳﺮﺥ ﻣﺮﭺ، ﻧﻤﮏ، ﺳﻮﮐﮭﺎ ﺩﮬﻨﯿﺎ، ﺯﯾﺮﮦ ﭘﺎﻭٔﮈﺭ، ﮐﭩﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﮐﺎﻟﯽ ﻣﺮﭺ، ﺳﺒﺰ ﻣﺮﭺ ﺍﻭﺭ ﺳﺒﺰ ﺩﮬﻨﯿﺎ ﺷﺎﻣﻞ ﮨﮯ ﺟﻮ ﮐﮧ ﻣﻨﮉﯼ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﺁﮌﮬﺘﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﭘﮏ ﺍﭖ ﭘﺮ ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ ﭨﮑﺎﭨﮏ ﮐﮯ ﺍﮈﻭﮞ ﮐﻮ ﺻﺒﺢ ﮔﯿﺎﺭﮦ ﺑﺠﮯ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﺳﭙﻼﺋﯽ ﮐﺮﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ۔
ﺁﺝ ﺳﮯ ﮐﺌﯽ ﺳﺎﻝ ﻗﺒﻞ ﻟﮑﺸﻤﯽ ﭼﻮﮎ ﻣﯿﮟ ﺑﭧ ﭨﮑﺎﭨﮏ ﺑﮩﺖ ﻣﺸﮩﻮﺭ ﮨﻮﺍ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ، ﻟﯿﮑﻦ ﭘﮭﺮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﮐﺎ ﭨﮑﺎﭨﮏ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﺴﭩﻤﺮﺯ ﮐﻮ ﺩﯾﺴﯽ ﮔﮭﯽ ﻣﯿﮟ ﭼﺎﻧﭗ ﻓﺮﺍﺋﯽ ﮐﯽ ﺁﭘﺸﻦ ﺩﯾﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺩﯼ۔ ﻻﮨﻮﺭﯾﻮﮞ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﭼﭩﺨﺎﺭﮦ ﺍﻭﺭ ﺯﺑﺎﻥ ﮐﺎ ﺫﺍﺋﻘﮧ ﺳﮕﯽ ﺍﻭﻻﺩ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺑﮍﮪ ﮐﺮ ﻋﺰﯾﺰ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ، ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺟﺐ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺩﯾﺴﯽ ﮔﮭﯽ ﻣﯿﮟ ﭨﮑﺎﭨﮏ ﮐﮭﺎﯾﺎ ﺗﻮ ﻻﮨﻮﺭﯼ ﮐﺎﮐﮯ ﮐﮯ ﺍﮈﮮ ﭘﺮ ﺟﻤﻊ ﮨﻮﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﮔﺌﮯ۔ ﺟﺐ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺍﮈﮮ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﻧﮯ ﯾﮧ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﺴﯽ ﮔﮭﯽ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﺟﺰﺍ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﻣﻞ ﮐﺮﻟﯿﺎ۔
ﺍﺏ ﻋﺎﻟﻢ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﺁﭖ ﮐﻮ ﮔﺎﮌﮬﯽ ﮔﺮﯾﻮﯼ ﺍﻭﺭ ﺗﯿﺰ ﻣﺼﺎﻟﺤﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﭼﺎﻧﭙﯿﮟ، ﻣﻐﺰ ﺍﻭﺭ ﮔﺮﺩﮮ ﮐﭙﻮﺭﮮ ﭘﺴﻨﺪ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﺁﭖ ﺑﭧ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ، ﻟﯿﮑﻦ ﺍﮔﺮ ﺁﭖ ﮐﻮ ﮐﺎﻟﯽ ﻣﺮﭺ ﯾﺎ ﮨﻠﮑﮯ ﻣﺼﺎﻟﺤﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﺘﻠﯽ ﮔﺮﯾﻮﯼ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﯾﮧ ﺳﺐ ﭼﺎﮨﯿﺌﮯ ﺗﻮ ﺁﭖ ﮐﯽ ﯾﮧ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮐﺎﮐﺎ ﭘﻮﺭﯼ ﮐﺮﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﻟﮑﺸﻤﯽ ﭼﻮﮎ ﻣﯿﮟ ﮐﻢ ﻭ ﺑﯿﺸﻦ ﭘﻨﺪﺭﮦ ﺳﮯ ﺯﺍﺋﺪ ﭨﮑﺎﭨﮏ ﮐﮯ ﺍﮈﮮ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﯿﮟ ﺟﻦ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﻭﮨﯽ ﮔﻮﺷﺖ، ﺍﺟﺰﺍ، ﻣﺼﺎﻟﺤﮧ ﺟﺎﺕ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﺴﯽ ﮔﮭﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﮯ، ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺳﯿﻞ ﺑﭧ ﺍﻭﺭ ﮐﺎﮐﮯ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﻧﭻ ﻓﯿﺼﺪ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿِﮟ، ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﻥ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﻣﻄﻠﻮﺑﮧ ﺫﺍﺋﻘﮧ ﻣﯿﺴﺮ ﻧﮩﯿﮟ۔
ﺍﺟﺰﺍ ﺳﺐ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺍﯾﮏ ﺟﯿﺴﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺫﺍﺋﻘﮧ ﮨﺮ ﺍﯾﮏ ﮐﺎ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺗﻮﮮ ﭘﺮ ﮐﮭﮍﺍ ﺷﯿﻒ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻧﺎﻟﺞ، ﻣﮩﺎﺭﺕ ﺍﻭﺭ ﺗﻮﮮ ﭘﺮ ﭘﮑﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﭨﯿﮑﻨﯿﮏ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﻮ ﺩﻭﺳﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﺟﺪﺍ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﺟﻮ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺍﮨﻢ ﻓﯿﮑﭩﺮ ﮨﮯ ﻭﮦ ﮨﮯ ﺍﺱ ﺷﯿﻒ ﮐﯽ ﺍﯾﻤﺎﻧﺪﺍﺭﯼ۔ ﮐﺎﮐﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﭧ ﮐﮯ ﺷﯿﻒ ﮔﻮﺷﺖ ﮐﻮ ﭘﻮﺭﺍ ﺗﻮﻟﺘﮯ ﮨﯿﮟ، ﻣﺼﺎﻟﺤﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮈﻧﮉﯼ ﻧﮩِﮟ ﻣﺎﺭﺗﮯ، ﺩﯾﺴﯽ ﮔﮭﯽ ﯾﺎ ﻣﮑﮭﻦ ﮐﯽ ﻣﻘﺪﺍﺭ ﭘﻮﺭﯼ ﮈﺍﻟﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﺲ ﺳﮯ ﺑﮭﻨﺎﺋﯽ ﺍﭼﮭﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺫﺍﺋﻘﮧ ﮐﮭﻞ ﮐﺮ ﻧﮑﻞ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺟﺐ ﮐﮧ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﭨﮑﺎﭨﮏ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﺟﺰﺍ ﺗﻮ ﻭﮨﯽ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺷﯿﻒ ﮐﮩﯿﮟ ﻧﮧ ﮐﮩِﮟ ﮈﻧﮉﯼ ﻣﺎﺭ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ، ﺟﺲ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﻭﮦ ﺫﺍﺋﻘﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﺒﮭﯽ ﺑﮭﯽ ﺑﭧ ﺍﻭﺭ ﮐﺎﮐﮯ ﮐﺎ ﻣﻘﺎﺑﻠﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﭘﺎﺗﮯ۔
ﺍﺟﺰﺍ ﺳﺐ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﺟﯿﺴﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺁﻭٔﭦ ﭘُﭧ ﺍﻭﺭ ﭘﺮﻓﺎﺭﻣﻨﺲ ﺳﺐ ﮐﯽ ﻣﺨﺘﻠﻒ۔ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﺍﻧﺼﺎﻑ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺟﻤﺎﻋﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺍﺳﯽ ﺗﻨﺎﻇﺮ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﯿﮟ۔
ﺍﮔﺮ ﺁﭖ ﮐﻮ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﮐﮯ ﺑﯿﺲ ﯾﺎ ﺗﯿﺲ ﻓﯿﺼﺪ ﺍﻣﯿﺪﻭﺍﺭ ﻭﮨﯽ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﺍﺱ ﺳﮯ ﻗﺒﻞ ﭘﯽ ﭘﯽ، ﻥ ﻟﯿﮓ ﯾﺎ ﻕ ﻟﯿﮓ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺍ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺍﺱ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺍﮔﺮ ﺁﭖ ﮐﻮ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺟﺐ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﺳﺎﺑﻘﮧ ﺟﻤﺎﻋﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﭽﮫ ﻧﮧ ﮐﺮﭘﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﺍﻧﺼﺎﻑ ﻣﯿﮟ ﺁﮐﺮ ﺗﺒﺪﯾﻠﯽ ﮐﺎ ﻭﻋﺪﮦ ﮐﯿﺴﮯ ﭘﻮﺭﺍ ﮐﺮﭘﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﺗﻮ ﺟﺎﻥ ﻟﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﺻﻞ ﻓﺮﻕ ﺍﻥ ﺍﻣﯿﺪﻭﺍﺭﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺍﻥ ﺟﻤﺎﻋﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ۔
ﺍﺻﻞ ﻓﺮﻕ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﻟﯿﮉﺭﺍﻥ ﺑﺸﻤﻮﻝ ﻧﻮﺍﺯﺷﺮﯾﻒ، ﺯﺭﺩﺍﺭﯼ، ﺍﺳﻔﻨﺪﯾﺎﺭﻭﻟﯽ، ﻓﻀﻞ ﺍﻟﺮﺣﻤﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﺳﺮﺍﺝ ﺍﻟﺤﻖ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ۔
ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﻭﮦ ﺷﯿﻒ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺟﻮ ﺧﯿﺒﺮﭘﺨﺘﻮﻥ ﺧﻮﺍﮦ ﻣﯿﮟ ﭘﺮﻭﯾﺰﺧﭩﮏ ﺟﯿﺴﮯ ﺭﻭﺍﯾﺘﯽ ﺳﯿﺎﺳﺘﺪﺍﻥ ﺳﮯ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﺫﺍﺋﻘﮯ ﮐﯽ ﺣﺎﻣﻞ ﺗﺒﺪﯾﻠﯽ ﻻﭼﮑﺎ، ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﮨﯽ ﻭﮦ ﻟﯿﮉﺭ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﺍﺳﮯ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺟﻤﺎﻋﺘﻮﮞ ﻭﺍﻟﯽ ﺳﭙﻼﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﺩﮮ ﺩﯼ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺍﺱ ﺳﮯ ﻧﮩﺎﯾﺖ ﺍﻋﻠﯽ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﺩﺍﺭ، ﺫﺍﺋﻘﮧ ﺑﺨﺶ ﺍﻭﺭ ﺻﺤﺖ ﻣﻨﺪ ﮈﺵ ﺑﻨﺎ ﮐﺮ ﻋﻮﺍﻡ ﮐﻮ ﭘﯿﺶ ﮐﺮﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩﯼ ﻭﺟﮧ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﮐﯽ ﺷﺨﺼﯽ ﺍﯾﻤﺎﻧﺪﺍﺭﯼ، ﻭﯾﮋﻥ ﺍﻭﺭ ﻋﻮﺍﻡ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﻤﭩﻤﻨﭧ ﮨﮯ۔
ﻣﺠﮭﮯ ﺳﻮﻓﯿﺼﺪ ﯾﻘﯿﻦ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﮐﯽ ﭨﯿﻢ ﻣﯿﮟ ﻧﻮﺍﺯﺷﺮﯾﻒ ﺍﻭﺭ ﺯﺭﺩﺍﺭﯼ ﺟﯿﺴﮯ ﻣﮩﺎ ﺣﺮﺍﻣﺨﻮﺭﻭﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺷﺎﻣﻞ ﮐﺮﺩﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺑﮩﺘﺮ ﮐﺎﻡ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺩﮐﮭﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ، ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺍﻣﯿﺪﻭﺍﺭ ﺗﻮ ﺑﮯ ﭼﺎﺭﮮ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﮨﯿﮟ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻭﮦ ﺍﮔﺮ ﮐﺮﭘﭧ ﺗﮭﮯ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﯾﮧ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻟﯿﮉﺭﺍﻥ ﯾﻌﻨﯽ ﻧﻮﺍﺯﺷﺮﯾﻒ ﺍﻭﺭ ﺯﺭﺩﺍﺭﯼ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﭘﭧ ﺗﮭﮯ۔ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﺍﻧﺼﺎﻑ ﻣﯿﮟ ﺁﮐﺮ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺭﻭﻝ ﻣﺎﮈﻝ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﮨﻮﮔﺎ ﺟﺲ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﭘﺮﻓﺎﺭﻣﻨﺲ ﻣﯿﮟ ﺯﻣﯿﻦ ﺁﺳﻤﺎﻥ ﮐﺎ ﻓﺮﻕ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺟﺎﺳﮑﮯ ﮔﺎ۔
ﺁﭖ ﺗﺴﻠﯽ ﺭﮐﮭﯿﮟ۔ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﺍﻗﺘﺪﺍﺭ ﻣﯿﮟ ﺁﮐﺮ ﺍﻥ ﺷﺎ ﺍﻟﻠﮧ ﺁﭖ ﮐﻮ ﻣﺎﯾﻮﺱ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﮮ ﮔﺎ !!!

Comments

Popular posts from this blog

Azeem solved past papers for FSc chemistry part 2

Azeem past papers and books by Azeem group of acadmeis are the best books for learning and teaching as well Azeem chemistry of Fsc part 2 are very good guide which include past paers of punjab boards include Ajk and etc Azeem past papers are the best papers ever i see both in quality and quantity I really suggest the students to bye Azeem past solved papers for good result 










Best Urdu paper presentation for Matric and Fsc students

Urdu paper need more presentation to get good marks in it there for irdu paper presentation is very important for all matric and inter students specially for Fsc students sp here is the best urdu presentation for the matric and inter and Fsc students








قد کو کیسے بڑھایا جایا کیا خوارک لی جائے اور کیا ورزش کی جائے

اج کل کے نوجوان طبقہ میں ایک چیز کو بہت زیادہ اہمیت دی جارہی ہے اور وہ ہے قد کہ قد کو کیسے بڑھایا جایا اج ہم اس موضوع پر بات کریں گے اور دیکھیں گے کہ قد میں کونسی چیزیں زیادہ اہمیت کے حامل ہے اور قد کو کس طرح بڑھایا جا سکتا ہے
بڑے قد کی اہمیت
یہ بات تو طے ہے کہ لمبا قد  ایک اچھی نوید ہے لمبے قد والے کو زیادہ پذیرائی ملتی ہے اور وہ زیادہ نمایاں طور پر ابھرتا ہے اسکو سرکاری نوکری جیسے کہ پولیس فوج یا دوسرے اداروں میں نوکری کے حصول میں زیادہ مشکلات پیش نہیں اتی اور خصوصا لڑکیاں کو بھی بڑے قد کا شہزادہ ہی چاہئے ہوتا ہے😂😂😂 بہر لمبے قد کی افادیت بھی ہے اور نقصان بھی
لمبے قد کے نقصانات 
لمبے قد کے اگرچہ فائدے بہت زیادہ ہے مگر اسکے نقصانات بھی اتنے ہی زیادہ ہے عموما لمبے قد والوں کو خاصی تکلیف پیش اتی ہے کہ وہ اپنی لمبی لمبی ٹانگیں کیسے سمیٹ کر بیٹھے اور کیسے سکون کے ساتھ وقت گزارے اسکےعلاوہ اگر قد لمبا ہو مگر بندہ خود پتلا ہو تو اسکا بہت زیادہ مزاق اڑایا جاتا ہے
مناسب قد کتنا ہونا چاہئے
ماہرین کے مطابق مناسب قد زیادہ سے زیادہ ساڑھے چھ انچ ہو اور کم سے کم ساڑھے پانچ انچ ہونا چاپئے اس سے زیاد…